دریا سے کبھی خیمے کو جائیں گے نہ عباس
چہرہ بھی سکینہ کو دکھائیں گے نہ عباس

کوزے لئے ہاتھوں میں جو اطفال کھڑے تھے
نظریں بھی کبھی اس نے ملائیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی

نیزے کی اجازت ہے سو نیزے سے لڑیں گے
تلوار کبھی ران میں چلائیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی

جی بھر کے انہیں دیکھ لئے اب ثانی زہرہ
جائیں گے تو اب لوٹ کے آئیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی

شرمندگی اتنی ہے بھتیجی سے کہ تاحشر
مشکیزے کو سینے سے ہٹائیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی

کس طرح سے وہ زین سے آئیں گے زمین پر
ہاتھوں کا سہارا بھی تو پائیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی

شاہد یہی معراج اطاعت ہے جری کی
آنکھیں رخ سرور سے ہٹائیں گے نہ عباس
دریا سے کبھی


darya se kabhi khaimay ko jayenge na abbas
chehra bhi sakina ko dikhayenge na abbas

kooze liye haaton may jo atfaal khaday hai
nazre bhi kabhi unse milayenge na abbas
darya se kabhi....

naize ki ijazat hai so naizay se ladengay
talwaar kabhi ran may chalayenge na abbas
darya se kabhi....

jee bhar ke unhe dekhle ab saniye zehra
jaayenge to ab laut ke aayenge na abbas
darya se kabhi....

sharmindagi itni hai bhathiji se ke ta-hashr
mashkeeze ko seene se hatayenge na abbas
darya se kabhi....

kis tarha se wo zeen se aayenge zameen par
haathon ko sahara bhi to payenge na abbas
darya se kabhi....

shahid yehi meraje ita-at hai jari ki
aankhein rukhay sarwar se hatayenge na abbas
darya se kabhi....
Noha - Darya Se Kabhi
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Murtuza/Riaz
Download mp3
Listen Online