چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے
لہو آنکھوں سے لیلہ کی مسلسل بہہ رہا ہے

بظاہر زخم تو ہے سینہ اکبر میں لیکن
حقیقت میں وہ نیزہ سینہ شہہ میں گڑا ہے
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے

سلام اکبر کا لایا شہہ کے بالوں میں سفیدی
گاہے بناہے آنکھوں میں اندھیرے چھا گئے ہیں
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے

الٹ کر آستین یاعلی کہتا ہے سرور
کہ برچھی کھینچا قلب پسر سے معجزہ ہے
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے

پھوپھی نہ آجائے نہ مقتل شاہ دین کے پیچھے
سخت اکبر کے لئے یہ مرحلہ ہے
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے

رچے جو شادی اکبر کی تو مجھ کو یاد رکھنا
مدینے سے کسی بیمار نے خط میں لکھا ہے
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے

علی اکبر کی شہید آخری رخصت کا منظر
بھرے گھر سے جنازہ جیسے کوئی جا رہا ہے
چراغ چہرہ اکبر نہ گھل ہو یہ دعا ہے


charaghe chehrae akbar na ghul ho ye dua hai
lahoo aankhon se laila ki musalsal beh raha hai

ba zahir zakhm to hai seenae akbar may lekin
haqeeqat may wo naiza seenae sheh may gada hai
charaghe chehrae....

salam akbar ka laaya sheh ke balon may safedi
gayi beenayi aankhon may andhera chah gaya hai
charaghe chehrae....

ulatkar aasteen ya ali kehte hai sarwar
ke barchi khayncha qalbe pisar se maujeza hai
charaghe chehrae....

phuphi aajaye na maqtal shahe deen ke peeche
sakht akbar ke liye ye marhala hai
charaghe chehrae....

rache shadi jo akbar ki to mujhko yaad rakhna
madinay se kisi bemaar ne khat may likha hai
charaghe chehrae....

ali akbar ki shahid aakhri ruqsat ka manzar
bhare ghar se janaza jaise koi jaa raha hai
charaghe chehrae....
Noha - Charaghe Chehrae Akbar
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Yazdan
Download mp3
Listen Online