چادروں کا نام سُن کر رو پڑی بنتِ علی
شام کے دربار میں
وا حجابا کہہ رہی تھی سیدہ کی لاڈلی
شام کے دربار میں

کُرسیوں پر قاتلانِ شاہ تھے بیٹھے ہوئے
سایہ دیوار میں تھے سب حرم لیکن کھڑے
با وفا کو ڈھونڈتی تھی دُخترِ شیرِ جری
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

شمر دیکھا تو سکینہ سہم کر رونے لگی
دور ہو جا شمر فضہ چیخ کر کہنے لگی
خوف سے مُرجھا رہی ہے باغِ اسمت کی کلی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

تشت میں بابا کے سر پر جب پڑی اسکی نظر
اپنے زخموں کی رہی نہ پھر سکینہ کو خبر
دوڑتی بابا کی جانب لاڈلی بیٹی چلی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

کون ہے زینب پکاری جس گھڑی فرعونی شام
ہائے غربت کہہ کے اُٹھا تھا میرا قیدی امام
اشک خوںکے رو رہا تھا شاہ کا بیٹا علی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

ظالموں کومل رہے تھے ظلم کرنے پر انعام
قہقہوں پر قہقہے تھے جام پرچلتے تھے جام
روتے روتے شام لوگو اہل ِاحمدکو ڈھلی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

حکم حاکم نے سنایا مار دو بیمار کو
اِس جگہ ہی قتل کر دو قافلہ سالار کو
گِرپڑی عابدکے ا وپر ہائے نازوںسے پلی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

جب علی اکبر کے سر کو سامنے لایا گیا
ہو گئی بے ہوش ماں سے نہ سنبھل پایاگیا
دخترِ فاطمہ پڑھنے لگی نادِ علی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔

زینبِ کبریٰ نے رو کر جس گھڑی خطبہ دیا
ہائے اے توقیر عابد کا بدن تھا کانپتا
ہتھکڑی پر مارتا تھا سر ولی اِبنِ ولی
شام کے دربار میں
چادروں کا نام سُن کر۔۔۔۔۔


chadaron ka naam sunkar ro padi binte ali
shaam ke darbar may
wa hijaba keh rahi thi sayyeda ki laadli
sham ke darbar may

kursiyon par qaatilane shah thay baithe hue
saaya e deewar may thay sab haram lekin khaday
ba-wafa ko dhoondti thi dukhtare shere jari
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

shimr dekha to sakina sehm kar ronay lagi
door hoja shimr fizza cheekh kar kehne lagi
khauf se murjha rahi hai baaghe ismat ki kali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

tasht may baba ke sar par jab padi uski nazar
apne zakhmo ki rahi na phir sakina ko khabar
daudti baba ki jaanib laadli beti chali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

kaun hai zainab pukara jis ghadi firaune shaam
haye ghurbat kehke utha tha mera qaidi imam
ashk khoon ke ro raha tha shah ka beta ali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

zaalimo ko mil rahe thay zulm karne par enaam
kehkahan par keh kahe thay jaam par chalte thay jaam
rotay rotay shaam logon aale ahmed ko dhali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

hukm haakim ne sunaya maar do bemaar ko
is jagah hi qatl kar do khaafila salaar ko
gir padi abid ke upar haye nazon se pali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

jab ali akbar ke sar ko saamne laaya gaya
hogayi behosh maa se na sambhal paaya gaya
dukhtarane fatema padne lagi nade ali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....

zainab e kubra ne rokar jis ghadi khutba diya
haye ay tauqeer abid ka badan tha kaampta
hathkadi par maarta tha sar wali ibne wali
sham ke darbar may
chadaron ka naam sunkar....
Noha - Chadaron Ka Naam
Download Mp3
Listen Online