چادرِ فاطمہ زہرا نہیں سر پر بھائی
پھر یہ ہمشیر کفن دے تمہیں کیونکر بھائی

اپنی ماں جائی کی ماں سے نہ شکایت کرنا
بے کفن تم کو جو دفناتی ہے خواہر بھائی
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

دیکھ کر عابدِ بیمار کی گردن کا نشان
بازوئوں کو بھی میرے دیکھیئے اُٹھا کر بھائی
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

آپ کے سینے پہ سوتی تھی جو اکثر بچی
قید خانے میں اُسے آئی ہوں کھو کر بھائی
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

آج زینب تمہیں دے دیتی کفن کے بدلے
کاش ہوتی میرے سر پر میری چادر بھائی
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

لاش مظلوم کی تھرا گئی اُس دم ہلمی
جب کے زینب نے کہا شہہ سے لپٹ کر بھائی
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔


chadare fatema zehra nahi sar par bhai
phir ye hamsheer kafan de tumhe kyun kar bhai

apni maajayi ki maa se na shikayat karna
bekafan tumko jo dafnati hai khahar bhai
chadare fatema zehra....

dekh kar abide bemaar ki gardan ka nashan
bazuon ko bhi mere dekhiye uthkar bhai
chadare fatema zehra....

aapke seene pa soti thi jo aksar bachi
qaid khane may usay aayi hoo khokar bhai
chadare fatema zehra....

aaj zainab tumhe de deti kafan ke badle
kaash hoti mere sar par meri chadar bhai
chadare fatema zehra....

laash mazloom ki thar-ra gayi us dam hilmi
jab ke zainab ne kaha sheh se lipat kar bhai
chadare fatema zehra....
Noha - Chadare Fateme Zehra
Shayar: Hilmi Afandi
Nohaqan: Askar Ali Khan
Download Mp3
Listen Online