بوند پانی نہیں بھیا نہ ہوا آتی ہے
ا ب بھی زندان سے سکینہ کی صدا آتی ہے

کان دُکھتے ہیں لہو ہوتا ہے زخموں سے رواں
یاد جب قید میں ظالم کی جفا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔

ایسا لگتا ہے کہ زنداں کو بھی آ رام نہیں
مجھ کو دیواروں سے رونے کی صدا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔

سونا چاہوں گی جو زنداں کی زمیں پر بھیا
نیند کب بابا کے سینے کے سوا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔

پاس بابا ہیں نہ ماں ہے اور نہ بھائی نہ چچا
ہائے کس حال میں بچی پہ قضا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔

ہائے بیمار بہن کو نہ کفن دے پائے
یاد سجاد کو زینب کی ردا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔

کوئی زندان میں نہ تنہا ہو سکینہ کی طرح
یہ ہی جواد کے ہونٹوں پہ دُعا آتی ہے
بوند پانی نہیں ۔۔۔۔۔


boond pani nahi bhaiya na hawa aati hai
abhi zindaan se sakina ki sada aati hai

kaan dukhte hai lahoo hota hai zaqmon se rawan
yaad jab qaid may zaalim ki jafa aati hai
boond pani nahi....

aisa lagta hai ke zindaan ko bhi aaraam nahi
mujhko deewaron se rone ki sada aati hai
boond pani nahi....

sona chahungi jo zindaan ki zameen par bhaiya
neend kab baba ke seene ke siva aati hai
boond pani nahi....

paas baba hai na maa hai aur na bhai na chacha
haaye kis haal may bachi pe qaza aati hai
boond pani nahi....

haaye bemaar behan ko na kafan de paaye
yaad sajjad ko zainab ki rida aati hai
boond pani nahi....

koi zindaan may na tanha ho sakina ki tarha
yehi jawaad ke hoton pe dua aati hai
boond pani nahi....
Noha - Boondh Pani Nahi
Shayar: Jawaad
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online