بولو اہلِ عزا فاطمہ فاطمہ
مر گئی سیدہ فاطمہ فاطمہ

شور گِریہ ہے آج، آلِ اطہار میں
ہائے کیا ہو گیا فاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

ہے سِرہانے علی، پینتی بیٹیاں
ہے نبی کی صدافاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

ماں کے لاشے سے ہیں ، بیٹے لپتے ہوئے
ہے قیامت بپا فاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

ہائے بعدِ نبی، ظلم کیا کیا ہوئے
آگ اور گھر تیرافاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

در گرایا گیا ، پہلوئے پاک پر
تجھ پہ اور یہ جفافاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

قتل محسن ہوا، بدنِ اطہار میں
ظلم کیسا ہوا فاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

ہائے کیا کیا ستم، بے سبب سہہ گئی
اے خدا اے خدافاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔

مضطرب ہے نگین، وقتِ امداد ہے
ہے تیرا آسرا فاطمہ فاطمہ
بولو اہلِ عزا ۔۔۔۔۔


bolo ehle aza fathima fathima
margayi sayyeda fathima fathima

shor girya hai aaj, aale-athaar may
haaye kya hogaya fathima fathima
bolo ehle azaa...

hai sirahnay ali, painti betiyaan
hai nabi ki sada fathima fathima
bolo ehle azaa...

maa ke laashay se hai, bete lipte huye
hai qayamat bapa fathima fathima
bolo ehle azaa...

haye baad-e-nabi, zulm kya kya hue
aag aur ghar tera fathima fathima
bolo ehle azaa...

dar giraya gaya, pehlu-e-paak par
tujpe aur yeh jafa fathima fathima
bolo ehle azaa...

khatl mohsin hua, badn-e-athar may
zulm kaisa hua fathima fathima
bolo ehle azaa...

haaye kya kya sitam, besabab seh gayi
ay khuda ay khuda fathima fathima
bolo ehle azaa...

mustarib hai nageen, waqt-e-imdaad hai
hai tera aasra fathima fathima
bolo ehle azaa...
Noha - Bolo Ehle Aza

Shayar: Nageen