عابد نے کہا آکے قریب بنتِ علی سے
اب سُوئے وطن چلیئے پھپی جان میں صدقے
سن کر یہ خبر زخمِ جگر پھٹ گئے سارے
مرقد سے لپٹ کر کیے زینب نے یہ نالے
میں جب بھی وطن جائوں گی بھیا
بِن تیرے نہ گھر جائوں گی بھیا

اٹھارہ برس کا علی اکبر بھی یہیں ہے
چھ ماں کا ننھا علی اصغر بھی یہیں ہے
ہے خاک بسر فرواہ کا دلبر
پامال بدن قاسمِ مضطر
کس دل سے میں گھر جائوں گی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔

کیا دن تھے کہ آباد تھا زہرا کا گلستاں
یہ کیسی نظر کھاگئی سب ہوگیا ویراں
باقی نہیں اب کوئی نگہباں
سب بھائی میرے ہوگئے بے جاں
مرجائوں گی مرجائوں گی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔

عباس سے اور تم سے ہے زینب کو ندامت
زندان میں چھوڑ آئی ہوں دونوں کی امانت
کیا ٹوٹ گئی مجھ پہ قیامت
کس درجہ ہے زینب کو خجالت
وہ لب پہ نہیں لائوں گی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔

سوتا ہے میرا دھوپ میں ننھا علی اصغر
کہتی ہے یہ بانو کے ہے والی بھی یہیں پر
زندان میںاک مرگئی دختر
بیٹھے گی نہ اب سائے میں مادر
کیا کہہ کے میں سمجھائوں گی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔

تیار نہیںسوئے وطن جانے کو لیلیٰ
وہ کہتی ہے میں چھوڑ دوں کس طرح سے تنہا
اٹھارہ برس کا میرا بیٹا
رہ جائے گا اس بن میں اکیلا
کیسے اُسے سمجھائوںگی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔

آمد کی خبر سن کے انیس آئیںگے سارے
یہ نیل نمایا ہے جو بازو پہ رسن کے
گر پوچھ لیامجھ سے کسی نے
بتلائوںگی اُن کو میں یہ کیسے
بس شرم سے مرجائوں گی بھیا
میں جب بھی وطن ۔۔۔


abid ne kaha aake qareeb binte ali se
ab suye watan chaliye phuphi-jaan mai sadke
sunkar ye khabar zakhme jigar phat gaye saare
markhad se lipat kar kiye zainab ne ye naale
mai jab bhi watan jaaungi bhaiya
bin tere na ghar jaaungi bhaiya

athara baras ka ali akbar bhi yahi hai
cheh maah ka nanha ali ashgar bhi yahi hai
hai khaakh basar farwa ka dilbar
pamaaal badan qasim-e-mustar
kis dil se mai ghar jaaungi bhaiya
mai jab bhi watan....

kya din thay ke abaad tha zehra ka gulistaan
yeh kiski nazar khagayi sab hogaya veeran
baakhi nahi ab koi nigebaan
sab bhai mere hogaye bejaan
marjaungi marjaungi bhaiya
mai jab bhi watan....

abbas se aur tum se hai zainab ko nidaamat
zindaan may chod aayi hoo dono ki amaanat
kya toot gayi  mujhpe qayamat
kis darja hai zainab ko khijaalat
woh lab pe nahi laaungi bhaiya
mai jab bhi watan....

sota hai mera dhoop may nanha ali ashgar
kehti hai yeh banu ke hai waali bhi yahi par
zinda’an may ek mar gayi dukhtar
baithegi na ab saaye may maadar
kya karke mai samjhaungi bhaiya
mai jab bhi watan....

tayyaar nahi suyae watan jaane ko laila
woh kehti hai mai chod doo kis tarha se tanha
athara baras ka mera beta
reh jaayega is ban may akela
kaise usay samjhaungi bhaiya
mai jab bhi watan....

aamad ki khabar sunke anees aayengay saare
yeh neel numaaya hai jo baazu pe rasan ke
gar pooch liye mujh se kisi ne
batlaungi unko mai ye kaise
bas sharm se marjaaungi bhaiya
mai jab bhi watan....
Noha - Bin Tere Na Ghar
Shayar: Anees
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online