بھُلا سکے گی نہ دنیا تیری وفا غازی
ہیں دونوں بازو تیرے دین کی بقا غازی
بھُلا سکے گی نہ دنیا تیری وفا غازی

چہارسمت تھی یلغار اہلِ باطل کی
علم نہ جھُکنے دیااور نہ خود جھُکا غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔

نبھائی اس طرح شبیر سے وفا توں نے
وفا کو کہنا پڑا توں ہے با وفا غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔  

تاریخ آج بھی جھُٹلا اسے نہیں سکتی
تیرے ہی خون کا صدقہ ہے لا اِلٰہ غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔

کہا سکینہ نے بابا نہ پانی مانگوں گی
بلا لو خیموں میں جلد ی میرا چچا غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔

پُکارے جائیں گے مشتاق حشر میں پیہم
درِ بتول کے سگ ہیں تیرے گدا غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔

ہیں دونوں بازو تیرے دین کی بقا غازی
بھُلا سکے گی نہ ۔۔۔۔۔


bhula sakegi na dunya teri wafa ghazi
hai dono baazu tere deen ki baqa ghazi
bhula sakegi na dunya teri wafa ghazi

chahaar simt thi yalghaar ahl-e-baatil ki
alam na jhukne diya aur na khud juka ghazi
bhula sakegi na....

nibhaayi is tarah shabbir say wafa tu nay
wafa ko kehna pada tu hai ba-wafa ghazi
bhula sakegi na....

tareekh aaj bhi jhutla isay nahi sakti
teray hi khoon ka sadqa hai la-ilaah ghazi
bhula sakegi na....

kaha sakina nay baba na pani maangungi
bula lo qaimo may jaldi mera chacha ghazi
bhula sakegi na....

pukaaray jaayengay mushtaaq hashr may payham
aray batool ke sag hai teray gada ghazi
bhula sakegi na....

hai dono baazu tere deen ki baqa ghazi
bhula sakegi na....
Noha - Bhula Sakegi Na
Shayar: Mushtaq
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online