جب آئی گیارہ محرم میانِ کربوبلا
بہن نے بھائی کہ پھیلے ہوئے لہو سے کہا
اے شہہ بے کساں خدا حافظ
اے میرے بھائی جاں خدا حافظ

لو چلا کارواں خداحافظ
بھائی شبیر فی امان اللہ، چلی ہمشیر فی امان اللہ

زمیں پہ بکھرے ہوئے نور اس بہن کا سلام
بدن دریدہ و مجبور اس بہن کا سلام
چلی ہے تم سے بہت دُور اس بہن کا سلام
مثالِ فاطمہ ہر دُکھ میں مسکرائوں گی
حسین زندہ ہے دنیا کو یہ بتائوں گی
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

سلام اُمِ ابیہہ کے گود کے پالے
سلام کرتے ہیں زہرا کے ہاتھ کے چھالے
سلام زلفِ محمد سے کھیلنے والے
پڑیں گے دُرّے تو میںصبر آزمائوں گی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

یہ غم نہیں ہے کہ میںسوگوار قیدی ہوں
ابو تراب کی اورفاطمہ کی بیٹی ہوں
میںاس کلیجے میں قوّت علی کی رکھتی ہوں
یزیدِوقت کے خیبر کو میں گرا ئو ںگی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

مسافروں کی قسم۲۷رہے وفا کے بہتّر  
لبِ فرات سُلگتے ہوئے گھروںکی قسم
سناںکی نوک پہ رکھے ہوئے سروںکی قسم
جلالِ حضرتِ عباس بن کے چھائوں گی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

خوشی اہلِ ستم باندھ لیںمیرے بازو
بنے گے نوح کا طوفان اب میرے آنسو
نہ چُھپ سکے گی یہ خونِ حسین کی خوشبو
میںسر کھلے ہوئے دربارِشام جائوںگی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

نگاہ جانبِ دریااُٹھی تو اتنا کہا
میرے دلیر علمدار فاتحِ دریا
تجھے خبر ہے میرے سر سے چھن گئی ہے ردا
تیرے علم کا پھریرا ردا بنائوںگی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

یہ غم نہیں ہے کہ میں سوگوار قیدی ہوں
ابوتراب کی اور فاطمہ کی بیٹی ہوں
میں اِس کلیجے میں قوّت علی کی رکھتی ہوں
یزیدِ وقت کے خیبر کو میں گرائوں گی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔

جو پہنچی شام تو بازار کو سجا دیکھا
کبھی نجف تو کبھی سوئے کربلادیکھا
پُکاری بابامیرا تم نے حوصلہ دیکھا
جہاںبھی جائوں گی فرشِ عزا بچھائوںگی
حسین زندہ ہے۔۔۔

بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔۔
سنا ہے سروروریحان خواہرِشبیر
علی کے لہجے میںکرتی تھی جس گھڑی تقریر
یزیدوشمر کے سینے پہ چلتی تھی شمشیر
وہ جب یہ کہتی تھی وعدے کو میں نبھائوں گی
حسین زندہ ہے۔۔۔
بھائی شبیر فی امان اللہ۔۔


jab aayi gyara moharram mayane karbobala
behan ne bhai ke pahile huve lahoo se kaha
ay shahe bekasan khudahafiz
ay mere bhai jaan khudahafiz

lo chala karwan khuda hafiz
bhai shabbir fi-amanillah, chali hamsheer fi-amanillah

zameen pe bikhre huve noor is behan ka salam
badan darida o majboor is behan ka salam
chali hai tumse bahot door is behan ka salam
misale fatema har dukh may muskura-ungi
hussain zinda hai dunya ko mai bata-ungi
bhai shabbir fi-amanillah....

salam umme abiha ke godh ke paale
salam karte hai zehra ke haath ke chaale
salam zulfe mohamed se khelne waale
padenge durre to mai sabr aazma-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

ye gham nahi hai ke mai sogwar qaidi hoo
abu turab ki aur fatema ki beti hoo
mai is kaleje may quwat ali ki rakhti hoo
yazide waqt ke khyber ki mai gira-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

rahe wafa ke bahatar masafiron ki qasam
labe farat sulagte huve gharon ki qasam
sina ki nok pe rakhe huve saron ki qasam
jalaale hazrate abbas banke cha-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

khushi se ehle sitam baandh le mere baazu
banenge nooh ka toofan ab mere ansuu
na chup sakegi ye khoone hussain ki khushboo
mai sar khule huwe darbare shaam jaungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

nigaah janibe darya uthi to itna kaha
mere diler alamdar faatahe darya
tujhe khabar hai mere sar se chingayi hai rida
tere alam ka pharera rida bana-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

jo pahunchi sham to bazaar ko saja dekha
kabhi najaf to kabhi suye karbala dekha
pukari baba mera tumne hausla dekha
jahan bhi jaungi farshe aza bicha-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....

suna hai sarwar o rehaan khahare shabbir
ali ke lehje may karti thi jis ghadi taqreer
yazeed o shimr ke seene pe chalti thi shamsheer
wo jab ye kehti thi waade ko mai nibha-ungi
hussain zinda hai....
bhai shabbir fi-amanillah....
Noha - Bhai Shabbir Fi-amanillah
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online