وہ سرِ حسین،وہ جابر،وہ کربلا
وہ شام سے پلٹ کے جب آیا تھا قافلہ
ناقوں کے جو چلنے سے اُبھرنے لگی صدا
جابر نے بڑھکے قافلے والوں سے یہ کہا
رُک جائو کہ یہ سلطنتِ ابنِ علی ہے
ناقوں پہ یہاں آنا بڑی بے ادابی ہے
جب اس صدا کو زینبِ دلگیر نے سنا
روئیں جگر کو تھام کے اور روکے یہ کہا
پروردگار شکر ہے تیرا بہت بڑا
جاگیرہے یہ غازی کی آتی ہے یہ صدا
پھر اس کے بعد ناقے سے خود کو گرا دیا
عباس کی بہن نے تڑپ کے یہ دی صدا
ارے زینب ہوں بھائی زینب ہوں بھائی
بھائی میں زینب ہوں

یہ کربلا ہے جاگیر تیری
ہم آئے تیری جاگیر میں
رہ گئی زنداں میں ہی سکینہ
یہ بھی لکھا تھا تقدیر میں
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

بازارِ کوفہ سے وہ گُزرنا
اہلِ حرم کے سالار کا
بھیا سجایا تھا اشقیائ نے
ایک ایک کونا بازار کا
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

بھیا تمہاری غیرت کی خاطر
بالوں سے پردہ کرتی رہی
چادر نہیں تھی سر پہ جو میرے
اک اک قدم پر مرتی رہی
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

بھیا سکینہ کو اک شقی نے
مانگا کنیزی میں جس گھڑی
میں بنتِ زہرا میں بنتِ حیدر
بھیا لرز کر میں رہ گئی
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

کیسا اندھیرا زندان تھا وہ
جس میں سکینہ جاں سے گئی
بابا چچا سے مجھ کو ملادو
معصوم رو روکہتی رہی
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

کُرتا جو اُس کا خوں میں بھرا تھا
اُس کو بنایا میں نے کفن
جب دفن کرتے تھے اُس کو عابد
تھرّارہا تھا اُن کا بدن
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

زنداں سے چُھٹ کر میں آگئی ہوں
رنج والم کی چادر لیئے
بازارِ کوفہ میں ہیں جو گزرے
آنکھوں میں سارے منظر لیئے
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔

ریحان زینب کی یہ فُغاں تھی
عباسِ غازی کی لاش پر
دیتی کفن میں اے بھیا تم کو
چھنتی نہ سر سے چادر اگر
پہچانو مجھ کو اے میرے غازی
زینب ہوں، اے بھائی۔۔۔


wo zaaire hussain, wo jaabir, woh karbala
wo shaam se palat ke jab aaya tha qafila
naqon ke jo chalnay se ubharne lagi sada
jaabir ne bhad ke qafilay waalon se ye kaha
ruk jao ke ye saltanat-e  ibn-e-ali hai
naqon pe yahan aana badi  be-adabi hai
jab is sada ko zainab-e-dilgeer ne suna
roi jigar ko thaam ke aur ro ke ye kaha
parwar-digar shukr hai tera bahot bada
jageer hai ye ghazi ki aati hai ye sada
phir is ke baad naaqay se khud ko gira diya
abbas ki behan ne tadap ke ye di sada
arey zainab hoon bhai zainab hoon bhai
bhai mai zainab hoon

ye karbala hai jageer teri
hum aaye teri jageer may
reh jaaye zindaan may hi sakina
ye bhi likha tha taqdeer may
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zinab hoon, ay bhai

bazaar-e-kufa se woh guzarna
ehle haram ke salaar ka
bhaiya sajaya tha ashqiyaan ne
ek ek kona bazaar ka
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

bhaiya tumhari ghairat ki khatir
baalon se parda karti rahi
chadar nahin thi sar per jo meray
ek ek qadam par marti rahi
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

bhaiya sakina ko ek shaqi ne
maanga kaneezi main jis ghadi
mai binte zehra mai binte Haider
bhaiya laraz kar mai reh gayi
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

kaisa andhera zindaan tha wo
jisme sakina jaan se gai
baba chacha se mujh ko mila do
masoom ro ro kehti rahi
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

kurta jo uska khoon may bhara tha
us ko banaya mai ne kafan
jab dafn karte thay us ko abid
tharra-raha tha un ka badan
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

zindan se chut kar main aa gai hoo
ranj-o-alam ki chadar liye
baazar-e-kufa may hain jo guzray
ankhon may saare manzar liye
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai

rehan zainab ki ye fughan thi
abbas-e-ghaazi ki laash per
deti kafan mai ay bhaiyya tumko
chinti na sar se chadar agar
pehchano mujh ko ay mere ghazi
zainab hoon, ay bhai
Noha - Bhai Mai Zainab Hoo
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online