پہنچا حسین کا سرِ انور کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی خواہر کہاں کہاں

عباس بڑھ کے دیکھو پسر کی تلاش میں
کھاتے ہیں رن میں ٹھوکریں سرور کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

بانو کے لال اصغرِ ناداں جواب دو
پھرتی ہے تم کو ڈھونڈتی مادر کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

نیزے پہ تھا کبھی کبھی طشتِ تلہ میں تھا
رکھا گیا حسین کا اک سر کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

کوفے میں راہِ شام دربارِ عام میں
کنبہ پھرا ہے شاہ کا در در کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔

مقتل میں راہِ کوفہ میں زندان میں وقار
سرور کو ڈھونڈتی رہی دُختر کہاں کہاں
بھائی کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔


pahuncha hussain ka sare anwar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi khaahar kahan kahan

abbas badke dekho pisar ki talaash may
khaate hai ran may thokare sarwar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi....

bano ke laal asghare nadan jawab do
phirti hai tumko dhoondti madar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi....

naize pe tha kabhi kabhi tashte tila may tha
rakha gaya hussain ka ek sar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi....

koofe may raahe sham darbare aam may
kunba phira hai shah ka dar dar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi....

maqtal may raahe koofa may zindan may viqar
sarwar ko dhoonti rahi dukhtar kahan kahan
bhai ko dekhti rahi....
Noha - Bhai Ko Dekhti Rahi
Shayar: Viqar
Nohaqan: Askar Ali Khan
Download Mp3
Listen Online