رہ گئی دشت میں تنہا تو وطن یاد آیا
پانی پیا تو ہر اک تشنہ دہن یاد آیا
لے کے ہر چیز مدینے سے چلی تھی زینب
لاش پر بھائی کے پہنچی تو کفن یاد آیا

شبیر تیری غربت کی قسم میں لاش تیری دفنا دیتی
گر سر پہ میرے چادر ہوتی میں تجھ کو کفن پہنا دیتی

شبیر یہ دیس پرایا ہے ورنہ میں تمہاری میت پر
انمبار لگاتی کلیوں کے پھولوں کا مینہ برسا دیتی

شبیر تمہیں معلوم تو ہے میرے ہاتھ بندھے ہیں گردن سے
گر ہاتھ میرے جو کھُلے ہوتے میں لاش وطن پہنچا دیتی

شبیر یہ تم نے اچھا کیا کعبے سے نکل آئے ورنہ
یہ اُمت وامو کے بدلے میں کعبے کو آگ لگا دیتی

کوثر یہ کسے حق حاصل ہے تحریر نبی کی چاک کرے
اُمت کو اگر منظور نہ تھا زہرا کو سند لوٹادیتی

بہن غریب ہے بھیا کفن بھی لا نہ سکی
اے بھائی اہلِ ستم سے تجھے بچا نہ سکی

وہ جس کی شادی کا مجھے ارمان تھا بھیا
میں ایسی اُجڑی کے دولہا اُسے بنا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

کہا رباب نے یہ رو کر پیاسے اصغر سے
مجھے یہ غم ہے کے پانی تجھے پلا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

اے بھائی شامِ غریباں کے گُپ اندھیرے میں
تمہاری بالی سکینہ کو نیند آ نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

دفن تمام شہیدوں کے ہو گئے لاشے
میں اپنے بھائی کی تربت مگر بنا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

غریب بھائی کا ماتم نہ کر سکی زینب
تمہاری لاش پہ آنسو بھی میں بہا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

جلایا آگ نے دامن کو اس طرح بھیا
تمہاری بیٹی سکینہ اُسے بجھا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔

یزیدیت نے تو چاہا حسینیت نہ رہے
غمِ حسین کو دُنیا محب مٹا نہ سکی
بہن غریب ہے ۔۔۔۔۔


ehgayi dasht may tanha to watan yaad aaya
pani paaya to har ek tashna dahan yaad aaya
leke har cheez madine se chali thi zainab
laash par bhai ke pahunchi to kafan yaad aaya

shabbir teri ghurbat ki qasam mai laash teri dafna deti
gar sar pe mere chadar hoti mai tujhko kafan pehna deti

shabbir ye des paraya hai warna mai tumhari mayyat par
ambaar lagati kaliyon ke phoolon ki meeh barsa deti

shabbir tumhay maloom to hai mere haath bandhe hai gardan se
gar haath mere jo khule hote mai laash watan pahuncha deti

shabbir ye tumne acha kiya kaabe se nikal aaye warna
ye ummat wamo ke badle may kaabe ko aag laga deti

kausar ye kisay haq haasil hai tehreer nabi ki chaak kare
ummat ko agar manzoor na tha zehra ko sanad lauta deti

behan ghareeb hai bhaiya kafan bhi la na saki
ay bhai ahle sitam se tujhe bacha na saki

wo jiski shadi ka arman tha mujhe bhaiya
mai aisi ujdi ke dulha usay bana na saki
behan ghareeb hai....

kaha rubab ne rokar ye pyase asghar se
mujhe ye gham hai ke pani yujhe pila na saki
behan ghareeb hai....

ay bhai sham e ghariban ke ghup andhere may
tumhari bali sakina ko neend aa na saki
behan ghareeb hai....

dafan tamam shaheedo ke hogaye laashe
mai apne bhai ki turbat magar bana na saki
behan ghareeb hai....

ghareeb bhai ka matam na kar saki zainab
tumhari laash pe aansoo bhi mai baha na saki
behan ghareeb hai....

jalaya aag ne daman ko is tarha bhaiya
tumhari beti sakina usay bujha na saki
behan ghareeb hai....

yazeediyat ne to chaha hussainiyat na rahe
ghame hussain ko dunya mohib mita na saki
behan ghareeb hai....
Noha - Behan Ghareeb Hai
Shayar: Mohib
Nohaqan: Sajid Hussain Jafri
Download Mp3
Listen Online