بازار کے منظر کو اور اپنے کھُلے سر کوبھولی نہیں میں
اپنے بندھے ہاتھوں کو بیمار کے زیور کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

اُٹھتی ہوئی آندھی کو وحشت کو بیاباں کو
چھُپتے ہوئے سورج کوتاریکی کو میداں کو
چلتے ہوئے خنجر کو نیزے پہ تیرے سر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

اک چاند تھا بدلی میں چھُپتا تھا نکلتا تھا
پردہ درِ خیمہ کا اُٹھتا کبھی گرتا تھا
وہ خیمئہ لیلیٰ سے ہائے رُخصتِ اکبر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

یاد آتا ہے دولہن کو غش کس طرح آئے تھے
اک گٹھڑی شاہِ والا جب کاندھوں پہ لائے تھے
اس لاش کی گٹھڑی کو اُس خوں بھری چادر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

فضّہ کو میرا بھائی ماں کہہ کے بُلاتا تھا
غم اُس کا میرے بھائی یہ نام پہ جاتا تھا
رُتبے میں وہ ماں بن کر آئی اُسی مادر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

لہراتے ہوئے نیزے اور شمر کا وہ بڑھنا
آ آ کے میرے پیچھے ہر بی بی کا وہ چھُپنا
شعلوں میں گھرے گھر کو چھِنتی ہوئی چادرکو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

یاد آتا ہے اک ماں کا،وہ خاک میں دھنس جانا
اور آگ کے شعلوں میں وہ ماں کا جھُلس جانا
جلتے ہوئے جھولے سے لپٹی ہوئی مادر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

معصوم سکینہ کو بڑھتے ہوئے نیزوں کو
کھِچتے ہوئے گالوں کوبے رحم تماچوں کو
رستے ہوئے کانوں کو کھچتے ہوئے گوہر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

جس رات میں تنہا تھی اُس رات کے ڈھلنے کو
ٹوٹے ہوئے نیزے کو اُس رات کے پہرے کو
بچوں کے سسکنے کو اور خاک کے بسترکو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔ ۔۔۔۔

اُن شام کی گلیوں کو جن سے کھُلے سر گزرے
جس در سے گزرنے میں تھے سولہ پہر گزرے
دربار کے اُس در کواور شامیوں کے شرکو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

ہے اج بھی وہ گریہ ہے آج بھی وہ زاری
ہے آج بھی پتھر کے سینے سے لہو جاری
روتے ہوئے پتھر کو پتھر پہ رکھے سر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔

آتی ہے نوید اب بھی آواز یہ زینب کی
ہے مجھ کو قسم صدیوں سے سوکھے ہوئے لب کی
پیاسے علی اصغر کو سوکھے ہوئے ساغر کو بھولی نہیں میں
بازار کے منظر کو ۔۔۔۔۔


baazar ke manzar ko aur apne khule sar ko bhooli nahi mai
apne bandhe haatho ko bemaar ke zewar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

uthti hui aandhi ko wehshat ko bayaban ko
chupte huwe suraj ko tareeki ko maidan ko
chalte huwe khanjar ko naize pe tere sar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

ek chand tha badli may chupta tha nikalta tha
parda dare qaima ka uthta kabhi girta tha
wo qaima-e-laila se haye ruqsate akbar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

yaad aata hai dulhan ko gash kis tarha aaye thay
ek gathri shahe wala jab kaandho pe laaye thay
is laash ki gathri ko us khoon bhari chadar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

fizza ko mera bhai maa kehke bulata tha
gham uska mere bhai ye naam pe jaata tha
rutbe may jo maa ban kar aayi usi maadar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

lehraate huwe naiza aur shimr ka wo badna
aa aake mere peeche har bibi ka wo chupna
sholo may ghire ghar ko chinti huwi chadar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

yaad ata hai ek maa ka,wo khaak may dhas jaana
aur aag ke sholo may wo maa ka jhulas jaana
jalte huwe jhule se lipti huwi maadar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

masoom sakina ko badte huwe naizo ko
khichte huwe gaalo ko be-rehm tamacho ko
ristay huwe kaano ko khichte huwe gauhar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

jis raat mai tanhaa thi us raat ke dhalne ko
toote huwe naize ko us raat ke pehre ko
bacho ke sisakne ko aur khaak ke bistar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

un shaam ki galiyo ko jin se khule sar guzre
jis dar se guzarne may thay sola peher guzre
darbar ke us dar ko aur shamiyo ke shar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

hai aaj bhi wo girya hai aaj bhi wo zaari
hai aaj bhi pathar ke seene se lahoo jaari
rote huwe pathar ko pathar pe rakhe sar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....

aati hai naved ab bhi awaaz ye zainab ki
hai mujko qasam sadiyo se sookhe huwe lab ki
pyase ali asghar ko sookhe huwe saagar ko bhooli nahi mai
baazar ke manzar ko....
Noha - Bazaar Ke Manzar Ko
Shayar: Naved
Nohaqan: Sajid Hussain Jafri
Download Mp3
Listen Online