شبیہ امامِ زماں کھینچتے ہیں
تصور میں تصویرِ جاں کھینچتے ہیں
کہا رو کہ اکبر نے اے درد تھم جا
کے سینے سے بابا سناں کھینچتے ہیں

اکبر نے کہا رو کر اے درد زرا تھم جا
بابا میرے سینے سے سناں کھینچ رہے ہیں
اے بہتے لہو رُک جا ہے واستہ صغرا کا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

پٹی میرے بابا نے آنکھوں پہ نہیں باندھی
دی ہے کھلے ہاتھوں سے رن میں میری قربانی
اے دادا خلیل آئو ہے وقت قیامت کا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

یثرب کی طرف آنکھیں ہر دم میری رہتی ہیں
اب وقت بہت کم ہے سانسیں بھی اُلجھتی ہیں
قاصد میری صغرا کے جلدی سے زرا آجا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

اکبر کی گزارش ہے للہ نہ رد کرنا
جب آپ کا شیوا ہے دنیا کی مدد کرنا
بابا کی مدد کرنے آجائیے اے دادا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

دیکھا نہیں جائے گا آنکھو سے کبھی میری
تڑپوںگا اگر میں تو تکلیف انہیں ہو گی
اُلفت کا تقاضہ ہے لرزے نہ بدن میرا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

ارمان جو دل میں ہے دل میں ہی نہ دفنا دے
ایسا نہ ہو زینب کو جا کر کوئی بتلادے
پیاری پھوپھی اماں سے برداشت یہ نہ ہوگا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

مرنے کا نہیں ہے غم غم ہے تو بس اتنا ہے
دروازہ پہ مدت سے بیٹھی ہوئی صغرا ہے
سن کر یہ خبر شاید مر جائے گی وہ دُکھیا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔

کہتا تھا تکلم وہ ہمت جو میری ہوتی
خود اپنے ہی ہاتھوں سے میں کھینچتا یہ برچھی
تکلیف نہیں اپنی ہے دردمجھے اسکا
بابا میرے سینے۔۔۔
اکبر نے کہا۔۔۔۔


shabihe imam e zamaan khaynchte hai
tasavvur may tasveere jaan khaynchte hai
kaha roke akbar ne ay dard thamja
ke seene se baba sina khaynchte hai

akbar ne kaha rokar ay dard zara tham ja
baba mere seene se sina khaynch rahe hai

ay behte lahoo ruk ja hai waasta sughra ka
baba mere seene se sina khaynch rahe hai

patti mere baba ne aankhon pe nahi baandhi
di hai khule haathon se ran may meri qurbani
ay dada khaleel aao hai waqt qayamat ka
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

yasrab ki taraf aankhein har dum meri rehti hai
ab waqt bahot kam hai saansein bhi ulajhti hai
qasid meri sughra ke jaldi se zara aaja
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

akbar ki guzaarish hai lilaah na radh karna
jab aapka sheva hai dunya ki madad karna
baba ki madad karne aajaiye ay dada
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

dekha nahi jaayega aankhon se kabhi meri
tadpoonga agar mai to takleef unhay hogi
ulfat ka taqaza hai larze na badan mera
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

armaan jo dil may hai dil may hi na dafnade
aisa na ho zainab ko jaakar koi batlade
pyari phupi amma se bardaasht na ye hoga
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

marne ka nahi hai gham gham hai to bas itna hai
darwaze pe muddat se baithi hui sughra hai
sunkar ye khabar shayad marjayegi wo dukhiya
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...

kehta tha takallum wo himmat jo meri hoti
khud apne hi haathon se mai khaynchta ye barchi
takleef nahi apni hai dard mujhe iska
baba mere seene se...
akbar ne kaha rokar...
Noha - Baba Mere Seene Se
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online