بابا کو صدائیںدیتی ہے جنگل میں سکینہ رات گئے
جب کان میں اُس کے آتی ہے آوازِ الیہ رات گئے

عباس نہیں قاسم بھی نہیں اکبر بھی نہیں اصغر بھی نہیں
بے گورو کفن ہے جنگل میں شبیر کا لاشہ رات گئے
بابا کو صدائیں ۔۔۔۔۔

زہرا کی دُلاری سر کھولے بے مکھنا و چادر بیٹھی ہے
رودادِ آلم دوہراتا ہے جلتا ہوا خیمہ رات گئے
بابا کو صدائیں ۔۔۔۔۔

جب شامِ غریباں کو لے کر عاشور کا سورج ڈوب گیا
سجاد کو بھی بے دینوں نے زنجیر میں جکڑا رات گئے
بابا کو صدائیں ۔۔۔۔۔


baba ko sadayein deti hai jangal may sakina raat gayi
jab kaan may uske aati hai aqaaz e ilayya raat gayi

abbas nahi qasim bhi nahi akbar bhi nahi asghar bhi nahi
be goro kafan hai jangal may shabbir ka laasha raat gayi
baba ko sadayein....

zehra ki dulaari sar kholay be-makhna o chadar baithi hai
roodad e alam dohrata hai jalta hua qaima raat gayi
baba ko sadayein....

jab sham e ghariban ko lekar ashoor ka suraj doob gaya
sajjad ko bhi be-deeno ne zanjeer may jakda raat gayi
baba ko sadayein....
Noha - Baba Ko Sadayein

Nohaqn: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online