بازارِ شام میں دربارِ عام میں
قیدی رہی نانا روتی رہی نانا
دو تحفے لائی ہوں میں آپ کے لیے
اک بھائی کا کُرتا اور بازوئوں کے نیل
کر بلا سے شام تک بے مکنہ و چادر
پُر خار راہوں پر چلتی رہی نانا

کیا بے کسی بھری آئی وہ شامِ غم
اسباب لُٹ گیا خیمے بھی جل گئے
جس دم میرے سر سے چھینی گئی ردا
عباس کو صدا دیتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

بالوں کا تھا پردہ بازو میں ریسماں
بالی سکینہ کا جکڑا ہوا گلا
کرتے رہے اعدا جو سنگ باریاں
ہر رنج و مصیبت سہتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

سجاد ناتواں پہ ظلم کا طوفاں
ہاتھوں میں ہتھکڑی پیروں میں بیڑیاں
دُرّے لگاتے تھے ہر گام پہ اعدا
اُس بے کسی پہ میں روتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

بانو کا لاڈلا اصغر بھی چل بسا
ماہِ بنی ہاشم غازی بھی چل بسا
عاشور کو دن بھر لُٹتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

کر بلا کے دشت میں یہ کیا ستم ہوا
میں بے ردا ہوئی وہ بے کفن رہا
تپتی زمیں پہ لاشہ پڑا رہا
میں کچھ نہ کر سکی گھُٹتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

زندانِ شام کا عالم عجب سا تھا
دن میں تھی تیز دھوپ راتوں میں اوس تھی
مائیں تڑپتی تھیں بچے بلکتے تھے
ہر پل میں وہاں پہ مرتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔

احمد بڑی غمگین زینب کی داستان
کانپ اُٹھتی لحد احمد کی اے حسن
مشکل کا مرحلہ طے کر کے آئی ہوں
بھائی کی موت پر روتی رہی نانا
بازارِ شام ۔۔۔۔۔


baazare sham may darbare aam may
qaidi rahi nana roti rahi nana
do tohfe layi hoon mai aap ke liye
ek bhai ka kurta aur bazuon ke neel
karbal se shaam tak bemaqna o chadar
pur-khar raho par chalti rahi nana

kya bekasi bhari aayi wo shame gham
asbaab lut gaya qaime bhi jal gaye
jis dum mere sar se cheeni gayi rida
abbas ko sada deti rahi nana
baazare sham....

balon ka tha parda bazu may reesma
baali sakina ka jakda huwa gala
karte rahe aada jo sang baariyan
har ranjo musibat sehti rahi nana
baazare sham....

sajjad natawan pe zulm ka toofan
haton may hathkadi pairon may bediyan
durre lagate thay har gaam pe aada
us bekasi pe mai roti rahi nana
baazare sham....

bano ka laadla asghar bhi chal basa
akbar bhi chal basa qasim bhi chal basa
mahe bani hashim ghazi bhi chal basa
ashoor ko din bhar lut-thi rahi nana
baazare sham....

karbal ki dasht may ye kya sitam hua
mai berida huwi wo bekafan raha
tapte zameen pe laasha pada raha
mai kuch na kar saki ghut-ti rahi nana
baazare sham....

zindane shaam ka aalam ajab sa tha
din may thi tez dhoop raton may oas thi
mayen tadapti thi bache bilakte thay
har pal wahan pe mai marti rahi nana
baazare sham....

ahmed badi ghamgeen zainab ki daastan
kaamp uth-ti  lehad ahmed ki ay hassan
mushkil ka marhala tay karke aayi hoo
bhai ki maut par roti rahi nana
baazare sham....
Noha - Baazar e Sham May
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Jawad-ul-Hassan
Download Mp3
Listen Online