بات آگئی پردے کی تو یاد آئے گی زینب
تاریخ غم و درد کو دہرا گئی زینب

اٹھتی جو نہیں لاش جواں دیجئے آواز
پالا ہے تو لاشہ بھی اٹھا لائے گی زینب
بات آئے گی

کس کس کو سنبھالے گی کسے دے گی تسلی
جلتے ہوئے خیموں سے کسے لائے گی زینب
بات آئے گی

سر ننگے جسے دیکھو کے سورج بھی نہ نکلا
اب سر کھلے بلوے میں وہی جائے گی زینب
بات آئے گی

مچلے گی جو سونے کے لئے رات کو بچی
کیا دے کے تسلی اسے بہلائے گی زینب
بات آئے گی

چادر ہی کا دے دیتی کفن چھین لی وہ بھی
اب بھائی کو کس طرح سے دفنائے گی زینب
بات آئے گی

پرسے کو انیس آئیں گے اور پوچھیں گے احوال
کس کس کو نشاں دروں کے دکھلائے گی زینب
بات آئے گی


baat aayegi parde ki to yaad aayegi zainab
tareekhe gham-o-dard ko dohrayegi zainab

uth-ti jo nahi laashe jawan dijiye awaaz
paala hai to laasha bhi utha laayegi zainab
baat aayegi....

kis kis ko sambhalegi kise degi tasalli
jalte hue qaimo se kise laayegi zainab
baat aayegi....

sar nange jise dekh ke suraj bhi na nikla
ab sar khule balwe may wohi jaayegi zainab
baat aayegi....

machlegi jo sonay ke liye raat ko bachi
kya deke tasalli usay behlayegi zainab
baat aayegi....

chadar hi ka de deti kafan cheenli wo bhi
ab bhai ko kis tarha se dafnayegi zainab
baat aayegi....

pursay ko anees aayenge aur poochenge ehwaal
kis kis ko nishan durro ke dikhlayegi zainab
baat aayegi....
Noha - Baat Aayegi Parde Ki
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online