باپ کے غم میں کہتی ہیں رو کر زینب اور کلثوم
سن کے ندائے غیبی ہیں مضطر زینب اور کلثوم
باپ کے غم میں

گھر میں خدا کے سجدہ حق میں ضرب لعین نے کاری لگائی
پا کے خبر نہ روئے کیونکر زینب اور کلثوم
باپ کے غم میں

آئی سحر انیس کی کیسی جس نے قیامت ہم پہ ڈھائی
نالہ کناں ہے کہہ کے دختر زینب اور کلثوم
باپ کے غم میں

دیکھ ہمارے زخمی سر کو دیکھ کے اپنی جاں کھوتی ہو
دیکھو گی کیسے زخم برادر زینب اور کلثوم
باپ کے غم میں

کرب و بلا میں رو نہ سکو گی بولے علی خود اشک بھر کر
کر لو بکا اب تم جی بھر کے زینب اور کلثوم
باپ کے غم میں


baap ke gham may kehti hai rokar zainab aur kulsoom
sunke nidae ghaibi hain muztar zainab aur kulsoom
baap ke gham may....

ghar may khuda ke sajdae haq may zarb laeen ne kaari lagaai
paa ke khabar na roye kyon-kar zainab aur kulsoom
baap ke gham may....

aayi sehar unnees ki kaisi jisne qayamat ham par dhaayi
naala kuna hai kehke ye dukhtar zainab aur kulsoom
baap ke gham may....

dekh hamare zakhme sar ko dekh ke apni jaan khoti ho
dekhogi kaise zakhme biradar zainab aur kulsoom
baap ke gham may....

karbobala may ro na sakogi bole ali khud ashq bahakar
karlo buka ab tum jee bhar kar zainab aur kulsoom
baap ke gham may....
Noha - Baap Ke Gham May

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online