کیا تجھ سے کہے حالِ سفر زینبِ مضطر
اے شہرِ مدینہ

لوٹ آئی ہوں میں اپنے بھرے گھر کو لُٹا کر
اے شہرِ مدینہ

اٹھارہ برس نازوں سے میں نے جسے پالا
وہ گیسوئوں والا
دُنیا سے گیا سینے پہ پھل برچھی کا کھا کر
اے شہرِ مدینہ
کیا تُجھ سے کہے ۔۔۔۔۔

دروازے پہ خیمے کے میں مجبور کھڑی تھی
اور دیکھ رہی تھی
جب سبطِ پیعمبر کے گلے پر چلا خنجر
اے شہرِ مدینہ
کیا تُجھ سے کہے ۔۔۔۔۔

تھے شاہ جسے پیار سے سینے پہ سُلاتے
اور ناز اُٹھاتے
زنداں کے اندھیرے میں اُسے آئی ہوں کھو کر
اے شہرِ مدینہ
کیا تُجھ سے کہے ۔۔۔۔۔

بچے ہی نہیں ساتھ میں کس طرح سے جائوں
یہ سوچ رہی ہوں
گھر دیکھوں گی جب خالی تو صبر آئے گا کیونکر
اے شہرِ مدینہ
کیا تُجھ سے کہے ۔۔۔۔۔

دل تھام کے روتے تھے سعید اہلِ مدینہ
جب کہتی تھی دُکھیا
میں آئی ہوں اماں کے بھرے گھر کو لُٹا کر
اے شہرِ مدینہ
کیا تُجھ سے کہے ۔۔۔۔۔


kya tujhse kahe haal-e-safar zainabe muztar
ay shehr-e-madina

laut aayi hoo mai apne bhare ghar ko lutakar
ay shehr-e-madina

athara baras nazon se maine jise paala
wo gaysuon wala
dunya se gaya seene pa phal barchi ka khakar
ay shehr-e-madina
kya tujhse kahe....

darwaze pe khaimay ke mai majboor khadi thi
aur dekh rahi thi
jab sibte payambar ke galay par chala khanjar
ay shehr-e-madina
kya tujhse kahe....

thay shah jise pyar se seene pa sulatay
aur naaz utha-tay
zindan ke andhere may usay aayi hoo khokar
ay shehr-e-madina
kya tujhse kahe....

bache hi nahi saath may kis tarha se jaaun
ye soch rahi hoo
ghar dekhungi jab khaali to sabr aayega kyunkar
ay shehr-e-madina
kya tujhse kahe....

dil tham ke rotay thay sayeed ahle madina
jab kehti thi dukhiya
mai aayi hoo amma ke bhare ghar ko lutakar
ay shehr-e-madina
kya tujhse kahe....
Noha - Ay Shehre Madina
Shayar: Sayeed Shaheedi
Nohaqan: Askar Ali Khan
Download Mp3
Listen Online