اے شبیہہِ مصطفیٰ اکبر میرے تم ہو کہاں

بعد تیرے کربلا میں اک قیامت آ گئی
قتل سرور ہو گئے اور شامِ غربت آ گئی
ہر طرف پھیلا ہوا تھا جلتے خیموں کا دھواں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

وقت کیسا آ گیا آلِ نبی ہے بے ردا
دُروں سے بیمار پر ظالم بھی کرتے ہیں جفا
غم میں تیرے رو رہی ہے یہ زمین و آسماں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

کانوں سے بہنا کے تیرے اب تلک ہے خوںرواں
چھینی ہیں ظالم نے اُسکے کانوں سے جو بالیاں
نیل ہیں گالوں پہ اُس کے ہے گلے میں ریسماں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

تھا بہت ارمان مجھ کو لائوں گھر تیری دولہن
تیرے سر پہ سہرا باندھوں اے میرے تشنہ دہن
کوئی بھی ارمان میرا پورا نہ ہو پایا یہاں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

باندھ کر بارہ گلوں کو اک رسن میں بے حیا
قید کر کے لے گئے ہم لوگوں کو اہلِ جفا
دل میرا پھٹتا ہے جب بھی سوچتی ہوں وہ سماں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

لکھا تھا صغریٰ نے خط میں اے میرے اکبر جواں
لینے کیوں آتے نہیں مجھ کو میرے اے بھائی جاں
پوچھے گی صغریٰ تجھے تو کیا کہے گی اُسے ماں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

پالا تھا جس نے وہ زینب غم میں تیرے روتی ہے
ہائے اکبر ہائے اکبر ہائے اکبر کہتی ہے
تُو بتا دے آکے مجھ کو کیسے سمجھائے گی ماں
اے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔

یہ تیری مجھ سے جدائی ہے بڑا مجھ پہ ستم
حشر تک بھولے گی نہ دنیا اے بیٹا تیرا غم
ہے تیرا شاعر یہ احمد اور حسن ہے نوحہ خواں
ے شبیہہِ مصطفیٰ۔۔۔۔۔


ay shabihe mustafa akbar mere tum ho kahan

baad tere karbala may ek qayamat aagayi
qatl sarwar hogaye aur shame ghurbat aagayi
har taraf phaila huwa tha jalte qaimon ka dhuwan
ay shabihe mustafa....

waqt kaisa aagaya aale nabi hai berida
durron se beemar par zaalim bhi karte hai jafa
gham may tere ro rahe hai ye zameen o aasman
ay shabihe mustafa....

kaano se behna ke tere ab talak hai khoon rawan
chini hai zaalim ne uske kanon se jo baaliyan
neel hai galon pe uske hai gale may reesma
ay shabihe mustafa....

tha bahut armaan mujhko la-un ghar teri dulhan
tere sar pe sehra baandhoo ay mere tashna dahan
koi bhi armaan mera poora na ho paaya yahan
ay shabihe mustafa....

baandh kar bara galon ko ek rasan may behaya
qaid karke le gaye hum logon ko ehle jafa
dil mera phat-ta hai jab bhi sochti hoo wo sama
ay shabihe mustafa....

likha tha sughra ne khat may ay mere akbar jawan
lene kyun aate nahi mujhko mere ay bhai jaan
poochegi sughra tujhe to kya kahegi ussay maa
ay shabihe mustafa....

paala tha jisne wo zainab gham may tere roti hai
haye akbar haye akbar haye akbar kehti hai
tu bata-de aake mujhko kaise samjhayegi maa
ay shabihe mustafa....

ye teri mujhse judayi hai bada mujhpe sitam
hashr tak bhoole gi na dunya ay beta tera gham
hai tera shayar ye ahmed aur hassan hai nowhaqan
ay shabihe mustafa....
Noha - Ay Shabihe Mustufa
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Jawad-ul-Hassan
Download Mp3
Listen Online