اے میرے بھائی رضا، میں ثانیئے زینب ہوں
تُو ثانیئے حسین، اے غریبُ الغربائ
اے میرے بھائی رضا، تجھ پہ ہمشیر فدا

تجھ سے ملنے کے لیے کتنے میلوں کا سفر
تیری زینب نے کیا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

مجھ کو پردیس میں یہ بات رُلاتی ہی رہی
دُور ہوں گھر سے مگر سر پہ ردا ہے بھائی
بنتِ زہرا نے مگر شام و کوفہ کا سفر
بے ردا کیسے کیا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

تیرے دیدار بِنا بھائی نہیں رِہ سکتی
غم میں فرقت کا تیری اور نہیں سہہ سکتی
کیا مجھے بھول گئے تم کو بہنا سے ملے
اک برس بیت گیا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

تم کو زندان میں کہیں قید نہ کر لے کوئی
میرے بابا کی طرح زہر نہ دے دے کوئی
جی نہیں پائوں گی میں سُن کے مر جائوں گی میں
تم کو گر کچھ بھی ہوا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

باپ کی طرح میرے سر پہ تیرا سایہ ہے
اپنی بیٹی کی طرح تُو نے مجھے پالا ہے
تُو ہے اے بھائی جہاں مجھ کو بُلاوا ہے وہاں
ہو گا احسان تیرا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

ساتھ ہم ہوتے اگر شام کو جاتے بھائی
پھر سکینہ کے لیے اشک بہاتے بھائی
کیا تم کو نہیں خبر آ گیا ماہِ سفر
وارثِ کرب و بلا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

موت سے پہلے مجھے ملنے برادر آ جا
اپنی صغریٰ کے لیے اے میرے اکبر آ جا
دل میں حسرت ہے میرے دیکھ لوں چہرہ تیرا
پھر مجھے آئے قضا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔

اے تکلم یہ بہن بھائی پہ جان دیتی تھی
سُن کے بھائی کی خبر خاک پہ یہ ایسے گِری
لب پہ تھا ہائے رضا دل پہ قابو نہ رہا
کھا گئی اُس کو قضا
اے غریبُ الغربائ۔۔۔


ay mere bhai raza, mai saniye zainab hoo
tu saniye hussain, ay ghareebul ghurba
ay mere bhai raza, tujhpe humsheer fida

tujhse milne ke liye kitne meelo ka safar
teri zainab ne kiya
ay ghareebul ghurba....

mujhko pardes my ye baat rulati hi rahi
duur hoo ghar se magar sar pe rida hai bhai
binte zehra ne magar shaam o koofa ka safar
be rida kaise kiya
ay ghareebul ghurba....

tera deedar bina bhai nahi reh sakti
gham mai furqat ka teri aur nahi seh sakti
kya mujhe bhool gaye tumko behna se milay
ek baras beet gaya
ay ghareebul ghurba....

tumko zindan may kahi qaid na karle koi
mere baba ki tarha zeher na dede koi
jee nahi paungi mai sun ke mar jaungi mai
tumko gar kuch bhi hua
ay ghareebul ghurba....

baap ki tarha mere sar pe tera saaya hai
apni beti ki tarha tune mujhe paala hai
tu hai ay bhai jahan mujhko bulwale wahan
hoga ehsaan tera
ay ghareebul ghurba....

saath hum hotay agar shaam ko jaate bhai
phir sakina ke liye ashk bahate bhai
kya nahi tum ko khabar aagaya maahe safar
waarise karbobala
ay ghareebul ghurba....

maut se pehle mujhe milne baradar aaja
apni sughra ke liye ay mere akbar aaja
dil may hasrat hai mere dekhloo chehra tera
phir mujhe aaye khaza
ay ghareebul ghurba....

ay takallum ye behen bhai pe jaan deti thi
sunke bhai ki khabar khaak pe ye aise giri
lab pe tha haye raza dil pe kaabu na raha
kha gayi usko khaza
ay ghareebul ghurba....
Noha - Ay Mere Bhai Raza
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online