اُس وقت جب کے زینب دربار میں گئی تھی
کھڑی نمازیوں سے محفل سجی ہوئی تھی
ظالم یہ پُوچھتا تھا غازی تیرا کہاں ہے
بالوں سے منہ چھُپائے زینب یہ کہہ رہی تھی

اے میرے بابا جاں ہو رہی ہے اذاں سر چھُپائوں کہاں
مجمعِ عام میں بے وطن بے اماں آ گیا کارواں
اے میرے بابا جاں۔۔۔۔۔

میں بھی ہوں مرضیہ بنتِ خیرُالنسائ
میرے لہجے میں ہے بابا تیری ادا
نام زینب میرا توں نے جو رکھ دیا دے دے اپنی زباں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

بابا جاں میں ردا مانگتی رہ گئی
بام و در سج گئے جیتے جی مر گئی
حلقئہ شام میں نام سُن کر میرا مر گیا ناتواں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

ہاتھ کانوں پہ ہے نیل گالوں پہ ہے
اور نشاں جو سکینہ کے شانوں پہ ہے
ہر نشاں سے یہی آ رہی ہے صدابابا جاں بابا جاں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

شامِ عاشور سے شام و کوفہ تلک
میںنے مانگانہیں ہے خراجِ فدک
میری چادر سے ہے میری ماں کا سکوں سُن لے ظالم جہاں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

بابا جاں یہ تیرا آخری تھا بیاں
تیری چادر بچائے گا غازی جواں
مر گیا باوفا چھِن گئی ہے ردا کہتی ہیں بیبیاں
عباس عباس عباس

رُک نہ پایا میرے باوفا کا وہ سر
نوکِ نیزہ سے آنے لگا خاک پر
بہن کو دربدر دیکھ کر ننگے سر سہہ نہ پایاجواں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

کل تھی ہا آج میں بھی دربار میں
مثلِ زہرا کھڑی ہوں میں ادھیار میں
اُس طرف ہیں شقی اس طرف رہ گئیں بے پدر بیٹیاں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔

ایسا خطبہ دیا میں نے دربار میں
لکھ رہا ہے جو یاور تیرے پیار میں
لہجئہ حیدری ہر اذاں کے لیے ہے صدائے اذاں
اے میرے بابا جاں ۔۔۔۔۔


us waqt jab ke zainab darbar may gayi thi
khaari namaziyon se mehfil saji hui thi
zaalim ye poochta tha ghazi tera kahan hai
balon se moo chupaye zainab ye keh rahi thi

ay mere baba jaan ho rahi hai azan sar chupaon kahan
majmaye aam may bewatan be-ama aagaya kaarwan
ay mere baba jaan....

mai bhi hoon marziya binte khairun nissa
mere lehje may hai baba teri aada
naam zainab mera tune jo rakh diya dede apni zubaan
ay mere baba jaan....

baba jaan mai rida maangti rehgayi
bamo-dar sajgaye jeete ji margayi
halqae shaam may naam sunkar mera margaya natawaan
ay mere baba jaan....

haath kaanon pe hai neel gaalon pe hai
aur nishaan jo sakina ke shano pe hai
har nishaan se yahi aa rahi hai sada baba jaan baba jaan
ay mere baba jaan....

shame ashoor se shaam o kufa talak
maine maanga nahi hai khiraaje fadak
meri chadar se hai meri maa ka sukaoon sunle zalim jahan
ay mere baba jaan....

baba jaan ye tera aakhri tha bayaan
teri chadar bachayega ghazi jawan
margaya bawafa chingayi hai rida kehti hai bibiyan
abbas abbas abbas

ruk na paaya mere bawafa ka wo sar
noke naiza se aane laga khaak par
behn ko darbadar dekh kar nange sar sehna paaya jawan
ay mere baba jaan....

kal thi ha aaj mai bhi hoon darbar may
misle zahra khadi hoon mai adhiyar may
us taraf hai shaqi is taraf rehgaye bepadar betiyan
ay mere baba jaan....

aisa khutba diya maine darbar may
likh raha hai jo yawar tere pyar may
lehjaye hydari har azan ke liye hai sada e azan
ay mere baba jaan....
Noha - Ay Mere Baba Jaan
Shayar: Yawar Abbas
Nohaqan: Shahid Baltistani
Download Mp3
Listen Online