پیاسے خیموں میں مسلسل ہے فغاں اے دریا
تو نے غازی کو چھپایا ہے کہاں اے دریا

کتنی حسرت سے تکے جاتے ہیں شہ کو عباس
جب سے گونجی علی اکبر کی اذان اے دریا

مشک پر تیر جو آیا تو یہ محسوس ہوا
جیسے سینے میں اتر آئے سناں اے دریا

ہاتھ کٹنے پہ بھی عباس کے تیور ہیں وہی
شاہ بچ جائیں چلی جائے یہ جاں اے دریا

جانے کب سے در خیمہ پہ کھڑے ہیں بچے
سوکھے ہونٹوں پہ رکھے خشک زباں اے دری

نوک نیزہ سے اتاری گئی زینب کی ردا
سو گیا خاک پہ جب شیر جواں اے دریا

تیرے ساحل پہ کبھی شاہ کے مقتل میں کبھی
روتی پھرتی ہے مسلسل کوئی ماں اے دریا

ہائے جز شام غریباں نہیں کوئی شاہد
رو کے کہتا ہے یہ خیموں کا دھواں اے دریا


pyase qaimo may musalsal hai fugha'n ay dariya
tune ghazi ko chupaya hai kahan ay dariya

kitni hasrat se takay jaatay hai sheh ko abbas
jab se goonji ali akbar ki azan ay dariya

mashk par teer jo aaya to ye mehsoos hua
jaise seeney may utar aayi sina ay dariya

haath katne pay bhi abbas kay tayvar hai wohi
shah bach jayen chali jaye ye jaan ay dariya

janay kab say dar-e-qaima pa khaday hai bachay
sukhay honto pa rakhi khushk zaban ay dariya

nokay naiza se utaari gayi zainab ki rida
sogaya khaak pa jab sher-e-jawan ay dariya

tere saahil pa kabhi shah ke maqtal may kabhi
roti phirti hai musalsal koi maa ay dariya

haye juz sham-e-ghariban nahi koi shahid
rokay kehta hai ye qaimo ka dhuwan ay dariya
Noha - Ay Dariya
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online