اے چاند محرم کے تُوں بدلی میں چلا جا
تُجھے دیکھ کے مر جائے نہ بیمار ہے صغریٰ

گھر زہرا کا لُٹنے کی خبر توں نے سُنائی
تُجھے دیکھ کے روتی ہے محرم میں خدائی
چودہ سو برس بیتے سب کرتے ہیں شکوہ
اے چاند ۔۔۔۔۔

ویران گھروں میں نہ اسے نیند ہے آتی
اکبر کی جُدائی ہے اسے خون رُلاتی
قدموں کے نشاں ڈہانپ کے بیٹھی ہے سرِ راہ
اے چاند ۔۔۔۔۔

گِن گِن کے توصغریٰ نے یہ دن ہیں گُزارے
زندہ ہے تو اکبر کی یادوں کے سہارے
دن رات تڑپتی ہے اسے اور نہ تڑپا
اے چاند ۔۔۔۔۔

بھیّا کی جُدائی میں پریشان ہے رہتی
ہر روز یہ نانا کو رو رو کے ہے کہتی
اکبر نہ ملا نانا میں مر جائوں گی تنہا
اے چاند ۔۔۔۔۔

رونے نہیں دیتے مجھے راتوں کو مسلماں
بیماری سے بے حال کچھ روز کی مہماں
ہر سمت سے ہے مجھ کو اب موت نے گھیرا
اے چاند ۔۔۔۔۔

ملنے کے لیے بھائی کو بے چین بڑی ہے
کب سے علی اکبر کی یہ راہوں میں کھڑی ہے
بچھڑی ہے یہ مدت سے اسے تُونہ نظر آ
اے چاند ۔۔۔۔۔

وعدہ جو کیا بہن کو سینے سے لگا کے
میں شادی کروں گا تو تیرے پاس ہی آ کے
میں سات محرم کو لوٹوں گا نہ گھبرا
اے چاند ۔۔۔۔۔

بہنوں کا تو بھائیو سے رشتہ ہی عجب ہے
تم بھول گئے مجھ کو یہ کیسا غضب ہے
اس آس پہ زندہ ہوں دیکھوں تیرا سہرا
اے چاند ۔۔۔۔۔

صغریٰ کے نصیبوں میں تو رونا ہی لکھا ہے
سردارمعصومہ کو ملی کیسی سزا ہے
خط آیا نہ اکبر کا روتی رہی صغریٰ
اے چاند ۔۔۔۔۔


ay chand moharram ke tu badli may chala ja
tujhe dekh ke marjaye na bemaar hai sughra

ghar zahra ka lutne ki khabar tune sunaayi
tujhe dekh ke roti hai moharram may khudaai
chauda sau baras beete sab karte hai shikwa
ay chand....

veerane gharon may na isay neend hai aati
akbar ki judaai hai isay khoon rulaati
khadmo ke nishan dhaamp ke baithi hai sare raah
ay chand....

gin gin ke to sughra ne ye din hai guzaare
zinda hai to akbar ke yadon ke sahaare
din raat tadapti hai isay aur na tadpa
ay chand....

bhaiya ki judaai may pareshan hai rehti
har roz ye nana ko ro ro ke hai kehti
akbar na mila nana mai marjaungi tanha
ay chand....

rone nahi dete mujhe raton ko musalman
bemaar se behaal kuch roz ki mehmaan
har simt hai mujhko ab maut ne ghayra
ay chand....

milne ke liye bhai ko bechain badi hai
kabse ali akbar ke ye rahon may khadi hai
bichdi hai ye muddat se isay tu na nazar aa
ay chand....

waada jo kiya behan ko seene se laga ke
mai shadi karunga to tere paas hi aake
mai saat moharram ko launtunga na ghabra
ay chand....

behno ka to bhaiyo se rishta hi ajab hai
tum bhool gaye mujh ko ye kaisa ghazab hai
is aas pe zinda hoon dekhun tera sehra
ay chand....

sughra ke naseebo may to rona hi likha hai
har baar masooma ko mili kaisi saza hai
khat aaya na akbar ka roti rahi sughra
ay chand....
Noha - Ay Chand Moharram Ke

Nohaqan: Nasir Asghar
Download Mp3
Listen Online