اے بے پدر سکینہ تجھ کو میرا سلام
سکینہ ہائے سکینہ

دن رات رونے والی، سینے پہ سونے والی
یادِ پدر میں ہائے جاں اپنی کھونے والی
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

پانی کو تھی ترستی ، مظلومی تھی برستی
جب مانگتی تھی پانی تھی نہر بھی لرزتی
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

شمرِ لعیں نے بڑھ کر، جب چھینے تیرے گوہر
روتی تھی تُوں لرز کر بابا تھا بس زباں پر
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

زنداں کاوہ اندھیرا، ظلم و ستم کا پہرا
اس کمسنی میں تجھ کو بربادیوں نے گھیرا
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

یہ کیسا وقت آیا، سر پر نہیں ہے سایہ
قسمت کی گردشوں نے زندان میں ہے لایا
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

زنداں میں موت آئی، ہر سُو اُداسی چھائی
مظلوم بیبیاں ہیں اور نوحہ خواں ہے بھائی
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔

مظلوم شہزادی،نظرِ کرم اِدھر بھی
بی بی ظہیر کی اب بھر دے تُو جھولی ساری
سکینہ ہائے سکینہ ۔۔۔۔۔


ay bepidar sakina tujhko mera salaam
sakina haye sakina

din raat rone wali, seene pe sone wali
yaade pidar may haye jaan apni khone wali
sakina haye sakina....

pani ko thi tarasti, mazloomi thi barasti
jab maangti thi pani thi nehr bhi larazti
sakina haye sakina....

shimre layeen ne badkar, jab cheene tere gowhar
roti thi tu laraz kar baba tha bas zaban par
sakina haye sakina....

zindan ka wo andhera, zulmo sitam ka pehra
is kamsini may tujhko barbadiyo ne ghera
sakina haye sakina....

ye kaisa waqt aaya, sar par nahi hai saaya
qismat ki gardishon ne zindan may hai laaya
sakina haye sakina....

zindan may maut aayi, har-soo udaasi chayi
mazloom bibiyan hai aur nowhakhan hai bhai
sakina haye sakina....

mazloom shahzadi, nazre karam idhar bhi
bibi zaheer ki ab bharde tu jholi saari
sakina haye sakina....
Noha - Ay Bepidar Sakina

Shayar: Zaheer