اصغر کو لے کہ گود میں کہتی ہے کربلا
یہ وہ علی ہے جسکو کبھی گھر نہیں ملا

چھہ ماہ کے غریب مسافر کو سونپ کے
کہنے لگے حسین یہ قبرِصغیر سے
رکھنا زراخیال میرے تشنہ کام کا
یہ وہ علی ہے جس کو۔۔۔

مادر یہ بین کرتی تھی دل میں ہے یہ کسک
صغرا تمہاری گود سے آغوشِ قبر تک
اصغر کو موت نے کہیں رُکنے نہیں دیا
یہ وہ علی ہے جس کو۔۔۔

ماںسوچتی تھی ڈھلتا ہے دن ہو رہی ہے شام
جھولے میںلوٹ آئے گا شاید وہ تشنہ کام
لیکن غضب ہوا کہ وہ جھولا بھی جل گیا
یہ وہ علی ہے جس کو۔۔۔

گلیوں میں شہرِ کوفہ کی بازارِشام میں
شیریں کے گھر کبھی کبھی دربارِشام میں
مرنے کے بعد بھی علی اصغر سفر میںتھا
یہ وہ علی ہے جس کو۔۔۔

ننے سے سر کو یاس سے بس تکتے رہتے تھے
پھر خون رو کہ سیدِ سجاد کہتے تھے
میںوہ علی ہوں جس کا بھرا گھر اُجڑگیا
ہے جس کو۔۔۔یہ وہ علی

جانے لگا وطن جو غریبوں کا کارواں
مڑمڑ کہ کہتی جاتی تھی اک خالی گود ماں
رکھیو سنبھال کر اسے اے ارضِ نینوا
یہ وہ علی ہے جس کو۔۔۔


asghar ko leke godh may kehti hai karbala
ye wo ali hai jisko kabhi ghar nahi mila

cheh maah ke ghareeb musaafir ko saump ke
kehne lagay hussain ye qabre sagheer se
rakhna zara khayaal mere tishnakaam ka
ye wo ali hai jisko...

maadar ye bain karti thi dil may hai ye kasak
sughra tumhari godh se aaghoshe qabr tak
asghar ko maut ne kahin rukne nahi diya
ye wo ali hai jisko...

maa sochti thi dhalta hai din ho rahi hai shaam
jhoole may laut aayega shayad wo tishnakaam
leki ghazab hua ke wo jhoola bhi jal gaya
ye wo ali hai jisko...

galiyon may shehre koofa ki bazaare shaam may
shireen ke ghar kabhi kabhi darbare shaam may
marne ke baad bhi ali asghar safar may tha
ye wo ali hai jisko...

nanhe se sar ko yaas se bas takte rehte thay
phir khoon roke sayyede sajjad ye kehte thay
mai wo ali hoo jiska bhara ghar ujad gaya
ye wo ali hai jisko...

jaane laga watan jo ghareebon ka kaarwan
mud mud ke kehti jaati thi ek khaali godh maa
rakhiyo sambhaal kar isay ay arze nainawa
ye wo ali hai jisko...
Noha - Asghar Ko Leke Godh
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online