اصغر کا بھی شمار بہتر میں ایک ہے
ہمراہیانِ سبطِ پیعمبر میں ایک ہے

کہتی ہے کم سنی کہ یہ گھر بھر میں ایک ہے
کب غازیوں میں فرد ہے لشکر میں ایک ہے
یاں حاجتِ دلیل گواہی نہیں کوئی
اس عمر کا جہاں میں سپاہی نہیں کوئی
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

کرب و بلا کا اگرچہ تقاضا ہے دم بہ دم
لیکن حُسین کیسے بڑھائیں ابھی قدم
محزر میں نام پورے بہتر کے ہیں رقم
موجود سب ہیں ایک مجاہد مگر ہے کم
گر وہ نہیں تو جنگ کہاں تھی نہیں کوئی
پھر حُرملا کا مدِ مُقابل نہیں کوئی
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

بس اس لیئے ہے اپنے گُلِ تر کا انتظار
اصحاب کا نہ فوج کا نہ لشکر کا انتظار
عباس کا نہ قاسم و اکبر کا انتظار
رن سات تک فقط علی اصغر کا انتظار
جب تک نہ پایا اُس کو شاہِ مشرقین نے
چھیڑا نہ کوئی کارِ شہادت حُسین نے
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔


ہاں جب تلک یہ عالمِ انوار میں نیہاں
دیتا تھا دستِ قُدرتِ حق اُس کو لوریاں
اکثر ستارے توڑ کہ دیتی تھی کہکشاں
اب کی تو پہرو لے کہ ٹہلتا تھا آسماں
مچلا تو پھر نہ مانہ ہزاروں سے پوچھ لو
راتوں کی نیند اُڑ گئی تاروں سے پوچھ لو
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

تحریر تھا جو عرش کے ماتھے پہ لااَلٰہ
پڑھتا تھا کلمہ جس کی بھی پڑ جاتی تھی نگاہ
اصغر وہ تھے واقفِ آدابِ رسم و راہ
حیران تھے فرشتے کہ اللہ کی پناہ
اس بے زبان پر یہ سمجھ گُل بدن میں ہے
کلمے کے بدلے کلمے کی اُنگلی دہن میں ہے
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

ہے کشمکش میں بادشاہِ آسماں جناب
اصغر تڑپ رہے ہیں کہ رن کو چلے شتاب
اور دل یہ سوچ سوچ کہ کھاتا ہے پیچ و تاب
جھولا ہوا جو خالی تو مر جائے گی رباب
آخر بڑھائے ہاتھ اسی غور و خوص میں
طوبٰی کی شان سے گئے کوثر کے حوض میں
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

مثلِ کمند گیسوئے پیچاں لیئے ہوئے
خنجر سے تیز دشنہِ مژگاں لیئے ہوئے
معصوم سی نگاہ کا پیکاں لیئے ہوئے
عطرت سے سب یہ جنگ کے ساماں لیئے ہوئے
نو لاکھ کے مقابلے کو جا رہا ہے اب
دُرِ نجف پہاڑ سے ٹکرا رہا ہے اب
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔

پیاسا تھا تین روز سے یثرب کا کارواں
اللہ رے تشنگی کہ بنی ہر نفس دھواں
وہ وقت تھا کہ بالی سکینہ بصد فُغاں
عباس کو دکھاتی تھی سوکھی ہوئی زباں
قرباں مگر صغیر کے اس آل بان پر
اک لفظ العتش بھی نہ آیا زبان پر
اصغر کا بھی ۔۔۔۔۔


asghar ka bhi shumaar bahattar may ek hai
hum-rahiyane sibte payambar may ek hai

kehti hai kamsini ke ye ghar bhar may ek hai
kab ghaziyon may fard hai lashkar may ek hai
yan haajate daleel gawahi nahi koi
is umr ka jahan may sipahi nahi koi
asghar ka bhi....

karbobala ka garche takaza hai dum ba dum
lekin hussain kaise badhaye abhi qadam
mehzar may naam koore bahattar ke hai raqam
maujood sab hai ek mujahid magar hai kam
gar wo nahi to jang kahan thi nahi koi
phir hurmula ka madde muqaabil nahi koi
asghar ka bhi....

bas isliye hai apne gulaytar ka intezar
as-haab ka na fauj ka na lashkar na intezar
abbas ka na qasim o akbar ka intezar
ran saat tak faqad ali asghar ka intezar
jab tak na paaya usko shahe mashraqain ne
cheda na koi kaare shahadat hussain ne
asghar ka bhi....

ajab talak ye aalam e anwaar may nihaa
deta tha daste khudrate haq usko loriyan
aksar sitare tod ke deti thi kehkashan
ib ki to pehro leke tehelta tha aasman
machla to phir na mano hazaron se poochlo
raton ki neend udh gayi taaron se poochlo
asghar ka bhi....

tehreer tha jo arsh ke maathe pe la ilaah
padta tha kalma jiski bhi pad jaati thi nigaah
asghar wo thay waaqife adaab e rasm o raah
hairaan thay farishte ke allah ki panaah
is bezaban par ye samajh gulbadan may hai
kalme ke badle kalme ki ungli dahan may hai
asghar ka bhi....

hai kash ma kash may baadshahe aasman janab
asghar tadap rahe hai ke ran ko chale shitaab
aur dil ye soch soch ke khaata hai pech o taab
jhoola hua jo khaali to mar jayegi raba
aakhir badaye haath isi ghaur o khaus may
tooba ki shaan se gayi kausar ke hauz may
asghar ka bhi....

misle kamand gaysu e paycha liye hue
khanjar se tez dishana e misgan liye hue
masoom si nigaah ka payka liye hue
itrat se sab ye jang ke samaan liye hue
nau laak ke mubaakile ko ja raha hai ab
durre najaf pahad se takra raha hai ab
asghar ka bhi....

pyasa tha teen roz se yasrab ka kaarwan
allah re tashnagi ke bani har nafas dhuan
wo waqt tha ke bali sakina basad fughan
abbas ko dikhati thi sookhi hui zaban
qurban magar sagheer ki is aal baan par
ek lafz al atash bhi na aaya zaban par
asghar ka bhi....
Noha - Asghar Ka Bhi Shumaar

Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online