اندھیرے دشت میں دکھیا سکینہ کیوں چلی آئیں
تن بے سر یہ کہتا تھا سکینہ کیوں چلی آئیں

پڑے ہیں خاک پر ٹکڑے یہاں تلواروں نیزے کے
نہ زخم آئے کوئی گہرا سکینہ کیوں چلی آئیں
اندھیرے دشت میں

بچائے کس طرح تم کو ستمگر کی جفائوں سے
بہت مجبور ہے بابا سکینہ کیوں چلی آئیں
اندھیرے دشت میں

نہ دور آواز اتنے غیب سے صحرائے خونی میں
اجل کا ہے یہاں پہرہ سکینہ کیوں چلی آئیں
اندھیرے دشت میں

دل بابا پہ کیا گذری تھی اس حال میں پا کر
یہ پہنے خون بھرا کرتا سکینہ کیوں چلی آئیں
اندھیرے دشت میں

بھٹک جائو گی رن میں کون پہنچائے گا خیموں تک
نہیں کوئی نہیں ایسا سکینہ کیوں چلی آئیں
اندھیرے دشت میں


andhere dasht may dukhiya sakina kyon chali aayi
tane besar ye kehta tha sakina kyon chali aayi

pade hai khaak par tukde yahan talwaaro naize ke
na zakhm aaye koi gehra sakina kyon chali aayi
andhere dasht may...

bachaye kis tarha tumko sitamgar ki jafaon se
bahot majboor hai baba sakina kyon chali aayi
andhere dasht may...

na do awaaz itne ghaib se sehrae khooni may
ajal ka hai yahan pehra sakina kyon chali aayi
andhere dasht may...

dil-e-baba pe kya guzri tumhay is haal may paa kar
ye pehne khoon bhara kurta sakina kyon chali aayi
andhere dasht may...

bhatak jaogi ran may kaun pahunchayega qaimo tak
nahi koi anees aisa sakina kyon chali aayi
andhere dasht may...
Noha - Andhere Dasht May
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online