کہتی تھی یہ رو رو کے سکینہ میرے بابا عموں نہیں آئے
میں کب سے کھڑی دیکھتی ہوں راستہ اُن کا عموں نہیں آئے

اے کاش! نہ میں بھیجتی ساحل پہ چچا کو
اٰمین کہیں ہاتھ اُٹھاتی ہوں دُعا کو
گھر خیر سے آ جائیں چچا جان خُدایا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

کب مشق و علم لے کے سوئے نہر گئے تھے
اور دے کے گئے تھے مُجھے کیا کیا وہ دلاسے
سب بھول گئے نہر کا پایا جو کنارا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

کُوزا لیئے ہاتھوں میں سرِ راہ کھڑی ہوں
ہے سوچنا دُشوار مگر سوچ رہی ہوں
شاید اُنہیں مُجھ سے بھی ہے زیادہ کوئی پیارا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

کہتے تھے کہ دریا سے ابھی لاتا ہوں پانی
کُچھ دیر جو ہو جائے تو رونا نہیں جانی
خیمے سے ذرا دور ہے دریا کا کنارا

عموں نہیں آئے ۔۔۔
کوئی اُنہیں دے دے میرا پیغام زبانی
آ جائو چچا اب میں نہیں مانگوں گی پانی
غم سے پھٹ جاتا ہے میرا آہ! کلیجہ
عموں نہیں آئے ۔۔۔

رِہ رِہ کے میرا سینے میں کٹتا ہے کلیجہ
میدان سے لوٹا نہیں اب تک میرا سقہ
مشکیزہ چِھدا خون میں ہے تر علم آیا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

میں ڈرتی ہوں اللہ بُرا وقت نہ لائے
کچھ دیر جو دریا سے ابھی اور نہ آئے
دم توڑ دے جھولے میں اصغر کہیں پیاسا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

کیوں تکتی ہیں حسرت سے پھوپھی جان ردا کو
کیا ہو گیا دریا پہ بتا اے ذرا مُجھ کو
کس کے لیئے روتا ہے یہ کُنبہ میرا سارا
عموں نہیں آئے ۔۔۔

ایسا نہ ہو اعدائ نے اُنہیں گھیر لیا ہو
مشکیزے پہ تیر آیا ہو سینے پہ لگا ہو
ساحل پہ کہیں ڈوب گیا ہو نہ سفینہ
عموں نہیں آئے ۔۔۔

یاور یہ بُکا کرتی تھی رو رو کے سکینہ
عموں کی خبر لیجیئے یا شاہِ مدینہ
عموں کے بغیر میرا دُشوار ہے جینا
عموں نہیں آئے ۔۔۔


kehti thi ye ro ro ke sakina mere baba ammu nahi aaye
mai kab se khadi dekhti hoo raasta unka ammu nahi aaye

ay kaash na mai bhejti saahil pe chacha ko
aameen kahe haath utha-ti hoo dua ko
ghar khair se aajaye chacha jaan khudaya
ammu nahi aaye...

kab mashk-o-alam leke suye nehr gaye thay
aur deke gaye thay wo mujhe kya kya wo dilaase
sab bhool gaye nehr ka paaya jo kanara
ammu nahi aaye...

kooza liye haaton may sare raah khadi hoo
hai soch na dushwar magar soch rahi hoo
shayad unhe mujhse bi hai zyada koi pyara
ammu nahi aaye...

kehte thay ke darya se abhi laata hoo pani
kuch dayr jo hojaye to rona nahi jaani
qaime se zara door hai darya ka kanara
ammu nahi aaye...

koi unhe dede mera paigham zabani
aa jao chacha ab mai nahi maangungi pani
gham se phata jaata hai mera aah kaleja
ammu nahi aaye...

reh reh ke mera seene may kat-ta hai kaleja
maidan se lauta nahi ab tak mera sakh-kha
mashkeeza chida khoon may hai tar alam aaya
ammu nahi aaye...

mai darti hoo allah bura waqt na laaye
kuch dayr jo darya se abhi aur na aaye
dam tod-de jhoole may asghar kahin pyasa
ammu nahi aaye...

kyon takti hai hasrat se phuphi jaan rida ko
kya hogaya darya pe bata ay zara mujhko
kis ke liye rota hai ye kunba mera saara
ammu nahi aaye...

aisa na ho aada ne unhe ghayr liya ho
mashkeeze pe teer aaye ho seene pe laga ho
saahil pe kahin doob gaya ho na safeena
ammu nahi aaye...

yawar ye buka karti thi ro ro ke sakina
ammu ki khabar lijiye ya shahe madina
ammu ke baghiar mera dushwaar hai jeena
ammu nahi aaye...
Noha - Ammu Nahi Aaye
Shayar: Yawar
Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online