عمو بھی نہیں آئے بابا بھی نہیں آئے
کیا بات ہے دریا پر جو جائے وہ رہ جائے
عمو بھی نہیں آئے

بتلا دے کوئی اتنا کس جا ہیں میرے عمو
میں جا کے مان لوں گی کوئی مجھے سمجھائے
عمو بھی نہیں آئے

اکبر ہیں قاسم ہیں نہ عون و محمد بھی
گھر لوٹ کے میدان سے اب تک کیوں نہیں آئے
عمو بھی نہیں آئے

شاید کے بہل جاتا دل جھولا جھلانے سے
ننھا سا میرا بھائی اصغر بھی چھوٹا ہائے
عمو بھی نہیں آئے

آواز تو دو بابا ہیں حد نظر لاشے
اب ڈھونڈے کوئی بھی جائے تو کہاں جائے
عمو بھی نہیں آئے

کانوں سے میرے چھینے جو شمر ستمگر نے
بابا گوہر مجھ کو جو تھے آپ نے پہنائے
عمو بھی نہیں آئے

نالوں سے سکینہ کے منہ کو جگر آیا
خاموشی سے انیس غم یہ قلب نہ پھٹ جائے
عمو بھی نہیں آئے


ammu bhi nahi aaye baba bhi nahi aaye
kya baat hai darya par jo jaaye wo reh jaaye
ammu bhi nahi....

batlade koi itna kis ja hai mere ammu
mai jaake mana loongi koi mujhe samjhaye
ammu bhi nahi....

akbar hai na qasim hai na auno mohammed bhi
ghar laut ke maidan se ab tak to nahi aaye
ammu bhi nahi....

shayad ke behal jaata dil jhoola jhulane se
nanha sa mera bhai asghar bhi chuta haaye
ammu bhi nahi....

awaaz to do baba hai hadde nazar laashe
ab dhoondne koi bhi jaaye to kahan jaaye
ammu bhi nahi....

kano se mere cheene jo shimre sitamgar ne
baba jo gohar mujhko jo thay aap ne pehnaaye
ammu bhi nahi....

naalon se sakina ke moo ko hai jigar aaya
khamoshi anees-e-gham ye talb na phat jaaye
ammu bhi nahi....
Noha - Ammu Bhi Nahi Aaye
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online