اماں نصار اُٹھو بابا کی جان سکینہ
گردن سے کھولتی ہے ماں ریسماں سکینہ

بانو کو چھوڑ کر تُو منہ اپنا موڑ کر تُو
زندان سے جا رہی سُوئے جناں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔

بی بی اب اُٹھ کے بیٹھو اماں نصار دیکھو
لایا ہے شمر شاید لو بالیاں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔

اے شاہ کی فدائی کیسے یہ نیند آئی
دے پاسبان نہ آکر پھر گُھرکیاں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔

کیا حال ہے یہ بیٹی دل پھٹ رہا ہے میرا
رہ رہ کے لے رہی ہو کیوں ہچکیاں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔

دیکھو ذرا خُدارا جانِ امام والا
سر پہ گِرا ہے ماں کے اب آسماں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔

محشر میں بھول جانا اس کو نہ شہزادی
حلمی بھی ہے تمہارا وہ مدح خواں سکینہ
اماں نصار ۔۔۔۔۔


amma nisar utho baba ki jaan sakina
gardan se kholti hai maa reesma sakina

bano ko chor kar tu moo apna moar kar tu
zindan say jaa rahi suye jina sakina
amma nisar utho....

bibi ab uthkay baitho amma nisaar dekho
laaya hai shimr shaayad lo baaliyan sakina
amma nisar utho....

ay shaah ke fidaai kaisi ye neendh aayi
de paasbaan na aakar phir ghurkiyaan sakina
amma nisar utho....

kya haal hai ye beti dil phat raha hai mera
reh reh ke lay rahi ho kyon hichkiyan sakina
amma nisar utho....

dekho zara khudaara jaane imam waala
sar par gira hai maa kay ab aasman sakina
amma nisar utho....

mehshar may bhool jaana isko na shahzaadi
hilmi bhi hai tumhara wo madhakhan sakina
amma nisar utho....
Noha - Amma Nisar Utho

Shayar: Hilmi Afandi