بازار میں یہ زینب فضّہ سے کہہ رہی
اماں مجھے چھُپا لو

بازار میں یہ زینب فضّہ سے کہہ رہی
عباس کی بہن کو ہر آ نکھ ڈھونڈتی ہے
اماں مجھے چھُپا لو

دیکھا نہ مرتضیٰ نے جس کو بغیر چادر
نہ نامحرموں میں ہائے وہ آ گئی کھُلے سر
قتلِ حسین سے بھی دشوار یہ گھڑی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

ہمت نہیں ہے میری کیسے قدم بڑھائوں
اس شہرِ بے ایماں میں خود کو کہاں چھُپائوں
ہاتھوں میں لے کے پتھر اُمت کھڑی ہوئی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

بیمارِ کربلا کی آنکھوں سے خوں ہے جاری
یہ سوچ کر بدن میں لرزا ہے اُس کے طاری
بے پردہ شامیوں میں بیٹی بتول کی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

پوچھے تو کوئی ان سے چھینا ہے کیا تمہارا
پردیسی بے وطن ہے کیا جرم ہے ہمارا
کیسا ہے یہ تماشا یہ بھیڑ کیوں لگی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

اس نام سے ہمیشہ آئی ہے مجھ کو غیرت
پالا ہے تم نے مجھ کو تم جانتی ہو عادت
بازار زندگی میں زینب کہاں گئی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

ساحل پہ لاشِ غازی اُس دم تڑپ گئی تھی
سر سے چھِنی تھی چادر جب بنتِ مرتضیٰ کی
وہ رات تھی اندھیری یہ دن کی روشنی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔

آیا خیال جب بھی آنسُو لگی بہانے
بازار کا تکلم کیسا اثر تھا جانے
اکثر وطن میں زینب یہ کہہ کے چونک اُٹھی ہے
اماں مجھے چھُپا لو
بازار میں یہ ۔۔۔۔۔


bazaar may ye zainab fizza se keh rahi
amma mujhe chupa lo

bazaar may ye zainab fizza se keh rahi
abbas ki bahen ko har aankh dhoondti hai
amma mujhe chupa lo

dekha na murtaza ne jisko baghair chadar
na mehramo may haye wo aagayi khule sar
qatle hussain se bhi dushwar ye ghadi hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

himmat nahi hai meri kaise khadam badhaun
is shehre be-amaan may khud ko kahan chupaun
haathon may leke pathar ummat khadi hui hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

bemaare karbala ke aankhon se khoon hai jari
ye soch kar badan may larza hai uske taari
beparda shamiyon may beti batool ki hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

pooche to koi inse cheena hai kya tumhara
pardesi bewatan hai kya jurm hai hamara
kaisa hai ye tamasha ye bheed kyun lagi hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

is naam se hamesha aayi hai mujhko ghairat
paala hai tumne mujhko tum jaanti ho aadat
baazaar zindagi may zianab kahan gayi hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

saahil pe laashe ghazi us dam tadap gayi thi
sar se chini thi chadar jab binte murtaza ki
wo raat thi andheri ye din ki roshni hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....

aaya khayaal jab bhi aansu lagi bahane
bazaar ka takallum kaisa asar tha jaane
aksar watan may zainab ye kehke chaunk uthi hai
amma mujhe chupa lo
bazaar may ye....
Noha - Amma Mujhe Chupa Lo
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Hamid Baltistani
Download Mp3
Listen Online