نوکِ سناں کے اوپر کہتا تھا فرقِ سرور
گھر لُٹ گیا ہے میرا مارا گیا برادر
اماں غریب ہوں میں

اصغر کے خوں سے میں نے دیکھو وضو کیا ہے
اس امتحان میں اُس نے بھی سُرخرو کیا ہے
اس کی لحد بنا کر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

میں کس قدر ہوں پیاسا اماں بتائوں کیونکر
سوکھا گلا تھا اتنا چلتا نہیں تھا خنجر
قبضے میں رکھ کے کوثر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

میں کیسا باپ تھا جو اے دورِ امتحانی
روتی رہی سکینہ میں دے سکا نہ پانی
آئے یقیں نہ کیونکر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

برچھی جواں پسر کے سینے سے میں نے کھینچی
انصارو اقربائ کی قاسم کی لاش دیکھی
ابنِ امیر ہو کر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

گھوڑوں کے دوڑنے سے پامال ہو چکا ہوں
کیا اب بھی میں وہی ہوں حیراں ہوںسوچتا ہوں
ناقہ بنے پیعمبر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

آپ آ گئی ہیں اماں یاد آ رہا ہے بچپن
وہ ساتھ ساتھ چلنا اور اپنے گھر کا آنگن
اب خاک کا ہے بستر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

دل غم سے چاک بھی ہے زخموں میں خاک بھی ہے
اُڑتی ہوئی نظر میں خیموں کی راکھ بھی ہے
زینب کا ہے کھُلا سر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔

ریحان پھٹ نہ جائے اہلِ عزا کاسینہ
بس روک لے یہیں پر شبیر کا یہ نوحہ
سب رو رہے ہیں سُن کر
اماں غریب ہوں ۔۔۔۔۔


noke sina ke upar kehta tha farqe sarwar
ghar lutgaya hai mera maara gaya baradar
amma ghareeb hoo mai

asghar ke khoon se maine dekho wazoo kiya hai
is imtehan may usne bhi surkh roo kiya hai
iski lehad banakar
amma ghareeb hoo....

mai kis khadar hoo pyasa amma batun kyun kar
sookha gala tha itna chalta nahi tha khanjar
qabze may rakhke kausar
amma ghareeb hoo....

mai kaisa baap tha jo ay daure imtehani
roti rahi sakina mai de saka na pani
aaye yaqeen na kyun kar
amma ghareeb hoo....

barchi jawan pisar ke seene se mai ne khaynchi
ansar o aqraba ki qasim ki laash dekhi
ibne ameer hokar
amma ghareeb hoo....

ghodon ke daudne se pamaal ho chuka hoo
kya ab bhi mai wohi hoo hairan hoo sochta hoo
naaqa bane payambar
amma ghareeb hoo....

aap aagayi hai amma yaad aa raha hai bachpan
wo saath saath chalna aur apne ghar ka aangan
ab khaak ka hai bistar
amma ghareeb hoo....

dil gham se chaak bhi hai zakhmo may khaak bhi hai
udthi hui nazar may qaimo ki raakh bhi hai
zainab ka hai khula sar
amma ghareeb hoo....

rehaan phat na jaye ahle aza ka seena
bas rokle yahin par shabbir ka ye nauha
sab ro rahe hai sunkar
amma ghareeb hoo....
Noha - Amma Ghareeb Hoo
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Syed Raza Abbas Zaidi
Download mp3
Listen Online