زندانِ شام میں جہاں بی بی کا ہے مزار
راتوں کو دھیمی دھیمی سی آتی ہے اک پُکار
کانوں سے میرے خون ابھی بھی ٹپکتا ہے
اماں بار بارگلہ میرا دُکھتا ہے

اُٹھتیں ہیں جب بھی آپ میرا سانس رکتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

سوئی نہیں ہوں شامِ غریباں کے بعد میں
اب کیا جیوں گی شام کے زنداں کے بعد میں
بے آس اب ہوں شاہِ شہیداں کے بعد میں
سایا اجل کا اماں میرے ساتھ چلتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

کانوں کا خون آنکھوں کے آنسو سے مل گیا
ہر زخم پھول بن کے بدن پر ہے کھِل گیا
باباکو ڈھونڈلائوکے سینے سے دل گیا
بے جان میرے جسم میں کیوں دل ڈھرکتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

اے اماں جب سے بابا سے میںدُور ہوگئی
یہ زندگی میرے لئے ناسُور ہوگئی
پر کیا کروں نصیب سے مجبور ہوگئی
ہجرِپدر سے سینے میں اک درداُٹھتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

کانٹے پڑے ہیں حلق میں اے اماں پیاس سے
ڈر تی ہوں جھونکا گزرے ہوا کا جو پاس سے
نیند اُڑگئی ہے آنکھوں سے خوف وہراس سے
رونے پہ میرے شمرِ لعیں کیوں جھڑکتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

اصغر کے بعد پانی پیوں میںنہیں نہیں
عمّوں کے بعد زندہ رہوں میں نہیں نہیں
فریاد کچھ شقی سے کروں میںنہیں نہیں
پانی میں عکسِ چہرئہ اصغر جھلکتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

لگتا ہے قیدِ جاں سے رہائی قریب ہے
اے اماں جان و تن رہائی قریب ہے
اب موت مجھ کو قبر کے لائی قریب ہے
دامن تو جل چکا ہے میرا دل ُسلگتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

کونین میںیہ کیسا ہے قانون پوچھیئے
مرنے کے بعد مجھ کو رہائی نہیں ملے
یہ کیسی قید ہے کہ لحد بھی یہیں بنے
قیدی کبھی تو قید سے گھر کو پلٹتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

اماں رہائی پا کے وطن تم تو جائو گی
صغرا میری بہن کو گلے سے لگائو گی
پوچھے گی جب مجھے تو اُسے کیا بتائو گی
رہ رہ کہ اک سوال میرے دل میں اُٹھتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔

جائو ندیم سروروریحان ایک بار
زندانِ شام میں جہاں بی بی کا ہے مزار
راتوں کو دھیمی دھیمی سی آتی ہے ایک پُکار
کانوں سے میرے خون ابھی بھی ٹپکتا ہے
اماں باربار۔۔۔۔۔


shaam may jahan bibi ka hai mazaar
raaton ko dheemi dheemi si aati hai ek pukaar
kaano se mere khoon abhi bhi tapakta hai
amma baar baar gala mera dukhta hai

uththi hai jab bhi aap mera saans rukhta hai        
amma baar baar....

soyi nahi hoo shaame ghareban ke baad mai
ab kya jiyungi shaam ke zindaan ke baad mai
be-aas ab hoo shahe shaheedan ke baad mai
saaya ajal ka amma mere saath chalta hai
amma baar baar....

kano ka khoon aankhon ke aansu se milgaya
har zakhm phool banke badan par hai khil gaya
baba ko dhoond laao ke seene se dil gaya
bejaan mere jism kyon dil dhadakta hai
amma baar baar....

ay amma jabse bab se mai door hogayi
ye zindagi mere liye nasoor hogayi
par kya karoon naseeb se majboor hogayi
hijre padar se seene may ek dard uthta hai
amma baar baar....

kaantein pade hai halq may ay amma pyaas se
darti hoo jhonka guzre hawa ka jo paas se
neendh udgayi hai aankhon se khauf-o-hiyaas se
rone pe mere shimr-e-layeen kyon jhidakta hai
amma baar baar....

asghar ke baad pani piyoon mai nahi nahi
ammu ke baad zinda rahoo mai nahi nahi
faryaad kuch shaqi se karoon mai nahi nahi
pani may aqse chehrae asghar jhalakta hai
amma baar baar....

lagta hai qaidga se rihaai qareeb hai
ay amma jaan-o-tan se rihaai qareeb hai
ab maut mujhko khabr ke laayi qareeb hai
daman to jal chuka hai mera dil sulagta hai
amma baar baar....

kaunain may ye kaisa hai kanoon poochiye
marne ke baad mujko rihaai nahi milay
ye kaisi qaid hai ke lehad bhi yahi bane
qaidi kabhi to qaid se ghar ko palat-ta hai
amma baar baar....

amma rihaai paake watan tum to jaaogi
sughra meri behan ko gale se lagaogi
poochegi jab mujhe to usay kya bataogi
reh reh ke ek sawaal mere dil may uthta hai
amma baar baar....

jao nadeem sarwar-o-rehaan ek baar
zindaan-e-shaam may jahan bibi ka hai mazaar
raaton ko dheemi dheemi si aati hai ek pukaar
kaano se mere khoon abhi bhi tapakta hai        
amma baar baar....
Noha - Amma Baar Baar
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online