الوداع اے بہن الوداع
بولے شاہ زمن الوداع

قتل کا میرے لمحہ قریب آگیا
اک اندھیرا سا چاروں طرف چھاگیا
وقت سے پہلے سورج بھی گہن آگیا
میں ہوں تنہامیرا ہر سہارا گیا
الوداع۔۔۔۔

چلتے چلتے فقط تم سے ہے اک سوال
میری پیاری سکینہ کا رکھنا خیال
بن میرے زندہ رہنا ہے اِس کو محال
میری بچی کو ہونے نہ دینا ملال
الوداع۔۔۔۔

جب گروں اپنے گھوڑے سے سُوئے زمیں
اور جھکادوں میں سجدے میں اپنی جبیں
مجھ کو زبح کرے گا جو شمرِ لعیں
تم نہ آجانا خیمے سے باہر کہیں
الوداع۔۔۔۔

میرے کنبے کی اب ہو تمہی پاسباں
ہے میرا جانشیں لاغروناتواں
راہِ کوفہ ہے زنجیر اور بیڑیاں
اب تمہارے حوالے ہے یہ کارواں
الوداع۔۔۔۔

لوٹنے آئے خیموں کو جب اشقیائ
ہو سکے تو بچا لینا اپنی ردا
صبر کرنا نہ کرنا کبھی بد دُعا
ہر قدم پر مددگار ہوگا خدا
الوداع۔۔۔۔

یوں نہ گردش میںآیا ستارہ کبھی
یوں ہوئے تھے نہ ہم بے سہاراکبھی
ساتھ اک پل نہ چھوٹا ہمارا کبھی
اب نہ آئے گا بھائی تمہارا کبھی
الوداع۔۔۔۔

اے بہن ایسی بھی آئے گئی رہ گزر
جب ملے تم کو رستے میں شیریںکا گھر
اور پہچان لے تم کو شیریں اگر
کہنا وعدہ ہوا پورااے خود سیعر
الوداع۔۔۔۔

سو گئے خاک پر تشنہ لب شاہِ دیں
جل گئے خیمے اور چادریں چھن گئیں
ہوگئی خالی شبیرسے یہ زمیں
اس صدائے الم آج تک ہے یہیں
الوداع۔۔۔۔

بھیج محشر غریبُ الوطن پر سلام
تشنہ لب خستہ تن بے کفن پر سلام
شہہ کے انصار پر پنجتن پر سلام
اک بھائی پہ اور اک بہن پر سلام
الوداع۔۔۔۔


alwida ay behan alwida
bole shahe zaman alwida

qatl ka mere lamha qareeb aagaya
ek andhera sa charon taraf chagaya
waqt se pehle suraj bhi grehn aagaya
mai hoo tanha mera har sahara gaya
alwida.........

chalte chalte faqat tumse hai ek sawaal
meri pyari sakina ka rakhna khayaal
bin mere zinda rehna hai isko mohaal
meri bachi ko hone na dena malaal
awlida...........

jab girun apne ghode se soye zameen
aur jhukadoon mai sajde may apni jabeen
mujhko zibha karega jo shimre laeen
tum na aajana qaime se bahar kaheen
alwida..........

mere kunbe ki ab ho tumhi paasbaan
hai mera janasheen laagharo natawan
rahe koofa hai zanjeer aur bediyaan
ab tumhare hawale hai ye karwaan
alwida......

lootne aaye qaimon ko jab ashqiya
ho sake to bacha lena apni rida
sabr karna na karna kabhi baddua
har qadam par madadgaar hoga khuda
alwida...........

yun na gardish may aaya sitara kabhi
yun hue thay na hum be-sahara kabhi
saat ek pal na choota hamara kabhi
ab na aayega bhai tumhara kabhi
alwida....

ay behan aisi bhi aayegi rehguzar
jab mile tumko raste may shireen ka ghar
aur pehchanle tumko shireen agar
kehna wada hua poora ay khushsiyar
alwida........

sogaye khaak par tashnalab shaahe deen
jalgaye qaime aur chaadaray chin gayi
hogayi khaali shabbir se ye zameen
is sadaye alam aaj tak hai yaheen
alwida............

bhej mehshar gharibul watan par salaam
tashnalab qastatan bekafan par salaam
sheh ke ansaar par panjatan par salaam
ek bhai pe aur ek behan par salaam
alwida.............
Noha - Alvida Ay Behan
Shayar: Mehshar
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online