علقمہ تیرے کنارے سو گیا غازی میرا
تھا بھروسہ جس پہ مجھ کو وہ برادر چل بسا

جاگتے تھے جس کے در سے اشقیانِ بد گوہر
ہاتھ کٹوا کر وہ بھائی چین سے اب سو گیا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

جب چھِدی مشکِ سکینہ خون بہا عباس کا
شیر نے پھر اپنا رُخ دریا کی جانب کر لیا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

پھینک کر کُوزے کو یہ بولی سکینہ دلفگار
پیاس کا شکوہ نہیں اب لوٹ کر آئو چچا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

تھام کر اپنی ردا کو بولی یہ شہہ کی بہن
پاسباں پردے کا میرے باوفا مارا گیا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

جب کہا عباس نے آقا میرا لیجیئے سلام
تھام کر اپنی کمر کو روتے تھے شاہِ ھُدیٰ
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

مشک پہ رُخسار رکھ کر سو گیا وہ باوفا
موت بھی اُس کو بھتیجی سے نہ کر پائی جدا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

اشک میں بالی سکینہ کے نظر آئی شبیہ
اک نیا سا آشیانہ بن گیا عباس کا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔

اس لیے غمگین ہے اے احمدجریِ باوفا
پیاسے بچوں تک حسن وہ پانی نہ لے جا سکا
علقمہ تیرے کنارے ۔۔۔۔۔


alqama tere kanare sogaya ghazi mera
tha bharosa jispe mujhko wo baradar chal basa

jaagte thay jiske darr se ashqiyan-e-bad gohar
haath katwa kar wo bhai chain se ab sogaya
alqama tere kanare....

jab chidhi mashke sakina khoon baha abbas ka
sher ne phir apna ruqh darya ki jaanib kar liya
alqama tere kanare....

phaink kar koozay ko ye boli sakina dilfigaar
pyas ka shikwa nahi ab laut kar aao chacha
alqama tere kanare....

thaam kar apni rida ko boli ye sheh ki bahan
paasban parde ka mere bawafa mara gaya
alqama tere kanare....

jab kaha abbas ne aaqa mera lijay salam
thaam kar apni kamar ko rote thay shahe huda
alqama tere kanare....

mashk pe ruqsaar rakh kar sogaya wo bawafa
maut bhi isko bhatiji se na kar paayi juda
alqama tere kanare....

ashk may bali sakina ke nazar aayi shabi
ek naya sa aashiyana bangaya abbas ka
alqama tere kanare....

isliye ghamgeen hai ay ahmed jari-e-bawafa
pyase bachon tak hassan wo pani na leja saka
alqama tere kanare....
Noha - Alqama Tere Kanare
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Jawad-ul-Hassan
Download Mp3
Listen Online