یہ کون سی مستورہ ہے کیا مانگ رہی ہے
اسلام کی خدمت کا صِلا مانگ رہی ہے
ہر صاحبِ غیرت سے ردا مانگ رہی ہے
پردیس میں مرنے کی دُعا مانگ رہی ہے
افسردہ ہے افلاک سیاہ پوش زمیں ہے
جبریل زرا دیکھ یہ زینب تو نہیں ہے

اللہ یہ کیسا منظر ہے
بے پردہ شامیوں میں اولادِپیمبرہے
اللہ یہ کیسا منظر ہے

ندا دے رہا ہے یہ ہنس کر منادی
اے لوگو گھرو ںسے نکل آئو جلدی
سزا ئیں دو ان کو یہ باغی ہیں باغی
بجتے ہیں شادیانے ہر ہاتھ میںپتھر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔

کہاں خوف کھاتا ہے ظالم کسی سے
بُلاتا ہے اک اک کو وہ نام لیکے
ہر اک بی بی چھپتی ہے زینب کے پیچھے
خود کو چھپائے زینب فضہ کی پشت پر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔

بتاتا ہے شمر آ کے خود شامیوں کو
کہ کاٹا ہے میں نے اسی سے سروں کو
دیکھاتا ہے لہرا کہ پھر بیبیوں کو
ہاتھوں میں اُس شقی کہ اک خوں بھرا خنجر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔

ہوا ہے اسر اتنا بینائیو پر
عجب کشمکش میں ہے اصغر کی مادر
ہر اک نیزہ بردار کہ پاس جاکر
رو رو کے پوچھتی ہے کیایہ میرا اصغر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔

اسیروںپہ کیسی مصیبت بنی ہے
ہر اک بی بی بازار میں ڈھوندتی ہے
سکینہ کہیں بھیڑ میں کھو گئی ہے
محشر سے پہلے برپا بازار میں محشر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔

قیامت میں کیسی قیامت ہے برپا
تکلم ہے گودی میں اصغر کا لاشہ
عدالت میںخالق کی آتی ہے زہرا
نظریں جھکی ہیں سب کی نبیوں کے لبوں پر ہے
اللہ یہ کیسا ۔۔۔۔


ye kaunsi mastoora hai kya maang rahi hai
islam ki khidmat ka sila maang rahi hai
har sahibe ghairat se rida maang rahi hai
pardes may marne ki dua maang rahi hai
afsurda hai aflaak siyaah posh zameen hai
jibreel zara dekhiye zainab to nahi hai

allah ye kaisa manzar hai
beparda shamiyo may aulaade payambar hai
allah ye kaisa manzar hai

nida de raha hai ye haskar manadi
ay logon gharon se nikal aao jaldi
sazae do inko ye baaghi hai baaghi
bajte hai shadiyane har haat may pathar hai
allah ye kaisa.....

kahan khauf khata hai zaalim kisi se
bulata hai ek ek ko wo naam leke
har ek bibi chupti hai zainab ke peeche
khud ko chupaye zainab fizza ki pusht par hai
allah ye kaisa.....

batata hai shimr aake khud shamiyo ko
ke kaata hai maine isi se saro ko
dikhata hai lehrake phir bibiyon ko
haaton may us shaqi ke ek khoon bhara khanjar hai
allah ye kaisa.....

hua hai asar itna beenaaiyo par
ajab kashmakash may hai asghar ki maadar
har ek naiza bardaar ke paas jaakar
ro ro ke poochti hai kya ye mera asghar hai
allah ye kaisa.....

aseero pe kaisi musibat bani hai
har ek bibi bazaar may dhoondti hai
sakina kahin bheed may kho gayi hai
mehshar se pehle barpa bazaar may mehshar hai
allah ye kaisa.....

qayamat may kaisi qayamat hai barpa
takallum hai godhi may asghar ka laasha
adalat may khaaliq ki aati hai zehra
nazre jhuki hai sabki nabiyon ke labon par hai
allah ye kaisa.....
Noha - Allah Ye Kaisa Manzar
Shayar: Mir Takallum
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online