بچھا کے فرشِ اعزا ، فاطمہ کو یاد کرو
علم سجائو کسی بے ردا کو یاد کرو

سیاہ کپڑے بدن پر ہوں صرف اس غم میں
رُکیں نہ آنکھ سے آنسُو کبھی محرم میں
لباسِ حضرتِ زینُ العبا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

کبھی سبیل سے پانی پیئو تو یہ کہہ کر
میں تیری پیاس پہ قربان حسین کی دُختر
کبھی سکینہ کبھی باوفا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

گلے میں شالِ اعزا اور ہاتھ سینوں پر
علم اُٹھا کہ چلو یوں دھکتے شعلوں پر
جو بے کسو ں پہ ہوئی اُس جفا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

جھولا جھُلائو کسی بے زباں کا جب بھی
تو یاد کرنا ذرا بے کسی وہ بانو کی
کبھی رُباب کی آہ و بُقا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

غمِ حسین ملا ہے تمہیں مقدر سے
صدا حسین کے ماتم کی آئے گھر گھر سے
حسین حسین کرو کربلا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

وہ جس نے دین کی خاطر لُٹا دیا گھر کو
خدا کی راہ میں جس نے کٹا دیا سر کو
پڑھو نماز تو اُس بے خطا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

علم جو حضرتِ عباس کا اُٹھاتے ہیں
دلِ بتول سے لاکھوں دُعائیں پاتے ہیں
علم کے سائے میں آئو دُعا کو یاد کرا
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

کبھی یہ سوچ کے تم دیکھنا پھریرے کو
یہی تو زینبِ مضطر کی آس تھا لوگو
علم کو دیکھو تو اُس بے ردا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

بہن کے سامنے دولہا بنے کوئی بھائی
جو اپنے بھائی کا سہرا نہ دیکھنے پائی
اُسی غریب بہن کی صدا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

خدا ناخواستہ قسمت یہ دن جو دِکھلائے
کسی جوان کو جوانی میں موت آ جائے
تو تم شبیہہِ نبی کی قضا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔

جو قتل گاہ کو بالوں سے جھاڑ کر روئی
صدا ہے مظہر و عرفان یہ اُسی ماں کی
میری غریب میری بے خطا کو یاد کرو
علم سجائو کسی ۔۔۔۔۔


bicha ke farshe aza, fatema ko yaad karo
alam sajao kisi berida ko yaad karo

siyah kapde badan par ho sirf is gham may
ruke na aankh se aansu kabhi moharram may
libaas-e-hazrate zainuleba ko yaad karo
alam sajao kisi....

kabhi sabeel se pani piyo to ye kehkar
mai teri pyaas pe kurban hussain ki dukhtar
kabhi sakina kabhi ba wafa ko yaad karo
alam sajao kisi....

galay may shaal e aza aur haath seeno par
alam uta ke chalo yun dahakte sholon par
jo bekaso pe huwi us jafa ko yaad karo
alam sajao kisi....

jhoola jhulao kisi be zaban ka jab bhi
to yaad karna zara bekasi wo bano ki
kabhi rubab ki aaho buka ko yaad karo
alam sajao kisi....

ghame hussain mila hai tumhe muqaddar se
sada hussain ka matam ki aaye ghar ghar se
hussain hussain karo karbala ko yaad karo
alam sajao kisi....

wo jis ne deen ke khaatir luta diya ghar ko
khuda ki raah may jis ne kata diya sar ko
pado namaz to us be-khata ko yaad karo
alam sajao kisi....

alam jo hazrate abbas ka utha-te hai
dil e batool se lakho duayein paate hai
alam ke saye may aao dua ko yaad karo
alam sajao kisi....

kabhi ye soch ke tum dekhna pharay-re ko
yahi to zainab-e-muztar ki aas tha logon
alam ko dekho to us berida ko yaad karo
alam sajao kisi....

bahen ke saamne dulha bane koi bhai
jo apne bhai ka sehra na dekhne paayi
usi ghareeb behen ki sada ko yaad karo
alam sajao kisi....

khuda na khasta kismat ye din jo dikhlaye
kisi jawan ko jawani may maut aajaye
to hum shabihe nabi ki kaza ko yaad kare
alam sajao kisi....

jo qatl-gaah ko balon se jhaad kar royi
sada hai mazhar o irfan ye usi maa ki
meri ghareeb mere be-khata ko yaad karo
alam sajao kisi....
Noha - Alam Sajao Kisi Berida
Shayar: Mazhar
Nohaqan: Irfan Haider
Download Mp3
Listen Online