اکبر کڑیل جوان اکبر کڑیل جوان
سینے پہ اکبر نے جب ظلم کی کھائی سنہ
ہر طرف چھائی ہوئی غم کی تھی تاریکیاں
کہتی تھی سر پیٹ کر اس طرح مقتل میں ماں
اکبر کڑیل جوان

کیسے ہوئے بیٹا تم آنکھوں سے میری نہاں
کیسے پر آشوب میں ماں تمہیں ڈھونڈے کہاں
تم ہی دو آواز ہو علی اکبر جہاں
اکبر کڑیل جوان

الغرض پوھنچے وہاں ٹھوکریں کھاتے حسین
خوں میں ڈوبا ہوا آیا نظر نور عین
کہ کے زمین پر گرے ہاے میرے دل کے چین
اکبر کڑیل جوان

دیکھا کے سینے سے ہے خوں کہ دریا رواں
درد سے نور نظر خاک پہ ہے نیم جاں
کھینچ لی دل تھام کے سینے سے شہ نے سنا
اکبر کڑیل جوان

لاشہ اکبر نہ جب شاہ ہدا سے اٹھا
رخ کیا سوے نجف آیے مشکل کشا
کیسے پر آشوب مئی دیکھئے میں لٹ گیا
اکبر کڑیل جوان

صدقے ہو تم پر یہ ماں آنکھیں تو کھولو ذرا
صدقے ہو تم پر یہ ماں منہ سے تو بولو ذرا
صدقے ہو تم پر یہ ماں زخم تو دھولو ذرا
اکبر کڑیل جوان


akbar-e-kadiyal jawan, akbar-e-kadiyal jawan
seene pe akbar ne jab zulm ki khaayi sina
har taraf chaayi hui gham ki thi tareekiyan
kehti thi sar peet kar is tarha maqtal may maa
akbar-e-kadiyal jawan....

kaise hue beta tum aankhon se meri nihaa
kaise pura shoab may maa tumhe dhoonde kahan
tum hi do awaaz ho ali akbar jahan
akbar-e-kadiyal jawan....

algharaz pahunchay wahan thokare khaate hussain
khoon may dooba hua aaya nazar noore ayn
kehke zameen par giray haaye mere dil ke chain
akbar-e-kadiyal jawan....

dekha ke seene se hai khoon ka dariya rawan
dard se noore nazar khaak pa hai neem jaan
khaynchli dil thaam ke seene se sheh ne sina
akbar-e-kadiyal jawan....

laashaye akbar na jab shahe huda se utha
rukh kiya suye najaf aaiye mushkil kusha
kaise pura shoab may dekhiye mai lut gaya
akbar-e-kadiyal jawan....

sadke ho tum par ye maa aankhein to kholo zara
sadke ho tum par ye maa moo se to bolo zara
sadke ho tum par ye maa zakhm to dholo zara
akbar-e-kadiyal jawan....
Noha - Akbar e Kadiyal Jawan

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online