عجیب ہے داستانِ غم عجیب ہے
نبی کی عطرت پہ یہ ستم عجیب ہے

بُھولنے والی بات نہیں تھی
گھر گھر اس کا چرچا تھا
یہ تو کل کی بات تھی خود اپنی
آنکھوں سے دیکھا تھا
مولائی کا تاج نبی نے خُم میں اس کو عطا کیا
عجیب ہے ۔۔۔

اک ہی نور کے دو ٹُکڑے ہیں
اک محمد اک علی
دونوں ہی محبوبِ الٰہی
دونوں کو معراج ہوئی
اک کو حق نے کر دیا ظاہر اک کو پردے میں چُھپا دیا
عجیب ہے ۔۔۔

زندہ باد ہے جذبہ اے ماتم
محنت اب رنگ لائی ہے
چودہ سو سالہ نفرت
اب کُھل کر سامنے آئی ہے
آج یزیدیت نے پردہ رُخ سے اپنے ہٹا دیا
عجیب ہے ۔۔۔

ٹھہر نہیں سکتے تھے بغیر
عزن فرشتے جس در پر
نقش نشانِ پائے محمد
ساکت تھے جس کی چوکھٹ پر
وائے مسلمانوں ہو تم پر تم نے وہ در جلا دیا
عجیب ہے ۔۔۔

ہاتھوں میں ہے شمر کے خنجر
زانُوں کے نیچے ہے حُسین
خیمے کے در پر کرتی ہے
زینب سر کُھولے ہوئے بین
بابا اب تم کب آئو گے بھائی کا کٹتا ہے گلا
عجیب ہے ۔۔۔

سر کو تن سے جدا کیا
سر چڑھا دیا پھر نیزے پر
لاشوں پر گھوڑے دوڑائے
بُجھی نہ دل کی آگ مگر
کلمہ گویوں نے خود اپنے نبی کے گھر کو جلا دیا
عجیب ہے ۔۔۔

ایسے میںاک بچی نکلی
خیموںسے گھبرائے ہوئے
خون ٹپکتا تھا کانوں سے
رُخ پہ یتیمی چھائی ہوئی
کانپ رہی تھی خوف سے وہ اورشمر تماچے مارتا تھا
عجیب ہے ۔۔۔

دامن میں تھی آگ لگی
سوئے نجف تھا رُخ اُس کا
روتی تھی چلاتی تھی
دے رہی تھی بابا کو صدا
روٹھ گئے کیوں آپ سکینہ سے بابا کیا کی تھی خطا
عجیب ہے ۔۔۔

بین سکینہ کے سُن سُن کر
تھراتی تھی لاشِ حُسین
ساحل پر اک لاشہ
اُٹھ اُٹھ پڑتا تھا ہو کر بے چین
آتی تھی رہ رہ کہ جب صدا آجائو آ جا ئو چچا
عجیب ہے ۔۔۔


ajeeb hai dastane gham ajeeb hai
nabi ki itrat pe ye sitam ajeeb hai

bhoolne wali baat nahi thi
ghar ghar iska charcha tha
ye to kal ki baat thi khud apni
aankhon se dekha tha
maulai ka kaad nabi qum may isko ata kiya
ajeeb hai....

ek hi noor ke do tukde hai
ek mohamed ek ali
dono hai mehboobe elahi
dono ko meraj hui
ek ko haq ne kardiya zaahir ek parde may chupa diya
ajeeb hai....

zindabad ay jazbae matam
mehnat ab rang laayi hai
chauda sau saala nafrat
ab khul kar saamne aayi hai
aaj yazeediyat ne parda rukh se apne hata diya
ajeeb hai....

tehr nahi sakte thay baghair
izn farishtay jis dar par
naqshe nishane paaye mohamed
saqt thay jiski chaukat par
waaey musalmano ho tum par tumne wo dar jala diya
ajeeb hai....

haaton may hai shimr ke khanjar
zanu ke neeche hai hussain
qaime ke dar par karti hai
zainab sar khole hue bain
baba ab tum kab aaoge bhai ka kat-ta hai gala
ajeeb hai....

sar ko tan se juda kiya
sar chada-diya phir naize par
laashon par ghode daudaye
bujhi na dil ki aag magar
kalmagoro ne khud apne nabi ke ghar ko jala diya
ajeeb hai....

aise may ek bachi nikli
qaimo se ghabrayi hui
khoon tapakta tha kano se
rukh pe yateemi chayi hui
kaamp rahi thi khauf se wo aur shimr tamache maarta tha
ajeeb hai....

daman may thi aag lagi aur
suye najaf tha rukh uska
roti thi chil-lati thi
geh deti thi baba ko sada
rooth gaye kyon aap sakina se baba kya ki thi khata
ajeeb hai....

bain sakina ke sun sun kar
thar-rati thi laashe hussain
saahil par ek laasha
uth uth padta tha hokar bechain
aati thi reh reh ke jab sada aajao aajao chacha
ajeeb hai....
Noha - Ajeeb Hai Dastane Gham

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online