شریکِ دعوتِ اسلام ہے ابو طالب
نبی کو حق کا اک انعام ہے ابو طالب
حریم میں وحی میں الہام ہے ابو طالب
حرم کے عظم کا احرام ہے ابو طالب
یہ سُن کے لائے جو غنچہ وہ پھول ہو جائے
پھر اُن کی گود میں پل کر رسول ہو جائے
شریکِ دعوت ۔۔۔

رسولِرب کا نگہبان ہے ابوطالب
ہے دین تو ایمان ہے ابوطالب نبی
نزولِ وحی کا عنوان ہے ابوطالب
بغیر لفظوں کا قرآن ہے ابوطالب
انہی کے دم سے ہوئی ابتدائ بسم اللہ
انہی نے نقطہ دیا زیرِبا ئِ بسم اللہ
شریکِ دعوت ۔۔۔

پیعمبری کی بلائوں کا رد ابوطالب
مدد خُدا کی ہے شکلِ مدد ابوطالب
نبی کی ڈھال دمِ جَدو کد ابوطالب
نشانہ ختم ِرسل اور زد ابوطالب
جہاد ان کا ہے پسِ منظر جہادِ علی
علی ہیں بعد میں ان کے یہ پہلے نادِ علی
شریکِ دعوت ۔۔۔

کہاں ہے تنگ نظر ہم سے بھی تو آنکھ ملا
ہے ان کے کُفر کا دعوہ تو کُچھ ثبوت بھی لا
کوئی تو رسم جہالت کی ان کے گھر میں دِکھا
بُتوں کے آگے جُھکا ا ن کاسر سر اپنا جُھکا
خُدا کے نُور پہ او خاک ڈالنے والے
یہ بُت شکن کو ہیں گودی میں پالنے والے
شریکِ دعوت ۔۔۔

رسول ان کا بڑا احترام کرتے ہیں
ثوابِ دید سے تنظیمِ عام کرتے ہیں
سحر کو اُٹھتے ہی اول یہ کام کرتے ہیں
انہیں نماز سے پہلے سلام کرتے ہیں
نبی کسی کافر کو یوں سلامی ہے
تو پھر ضرور نبوت میں کوئی خامی ہے
شریکِ دعوت ۔۔۔

انہی کے گھر میں خیراُلانعام صلے علیٰ
پسر نبی کا ہے قائم مقام صلے علیٰ
اسے نصیب ہے یہ احترام صلے علیٰ
کہ ان کے خُرد ہیں سارے امام صلے علیٰ
خطا معاف ہو یہ بھی اگر نہیں مومن
تو پھر جہاں میں کو ئی بشر نہیں مومن
شریکِ دعوت ۔۔۔

نہ جانچیئے یہ روایت نہ سیرت و کردار
نبی کی آنکھ سے ان کو دیکھیئے اک بار
یہ بارگاہِ رسالت میں آپ کا تھا وقار
بچھا کے خاک انہیں روئے احمدِ مُختار
وہ عامِ حُزن بنا ان کا جب وصال ہوا
یہ غم رسول کی اُمت میں اک سال ہوا
شریکِ دعوت ۔۔۔

یہ مرنے والا گر ایمان ہی نہ لایا تھا
تو کیا رسول نے کافر کا غم منایا تھا
زُبان پہ وا اباۃٰ بار بار آیا تھا
وہ خود بھی روئے تھے اوروں کو بھی رُلایا تھا
جتا دیا تھا کہ جو مُحسنِ رسالت ہے
تو اُسکو رونا رُلانا نبی  کی سُنت ہے
شریکِ دعوت ۔۔۔

یہ بات اگر ہو اجازت تو پُوچھ لوں میں یہیں
حُسین ابنِ علی کیا نہیں تھے مُحسن ِدیں
ہم ان کو روئیں تو پھر کیوںہو چیں با جبیں
بنے تھے ان کا تو ناقہ رسولِ عرشِ نشیں
حُسین سوئے شہِ مُرسل کے سینے پر
غضب ہے شمر کا زانوں اُنہیں کے سینے پر
شریکِ دعوت ۔۔۔

یہ بگوشِ ہوش کیوں جب حالِ کربلا سُنیئے
سُنا جو میرے تصور نے جو وہ ذرا سُنیئے
بیان ہمتِ صبر و شاہ ِالھُدیٰ سُنیئے
وہ آتی ہے ملک ُالموت کی صدا سُنیئے
مِلا جو حُکم کہ سر سے نکال جانِ حُسین
کہا کہ سخت ہے یا رب یہ امتحانِ حُسین
شریکِ دعوت ۔۔۔

لگا ہے زخم تبر بہہ رہا ہے سر سے لہو
بھرے ہیں خون میں جانِ رسول کے گیسُو
قریب جا کے رکھوں دل پہ کس طرح قابو
کہ اس لہو میں تو ہے فاطمہ کے دودھ کی بُو
ندا یہ آئی کہ آنکھیں تو ڈال آنکھو ں میں
کہا بہن کا ہے اس دم خیال آنکھوں میں
شریکِ دعوت ۔۔۔

ندا یہ آئی کہ گردن سے کھینچ جان ان کی
کہا میں کیا کروں گردن پہ چل رہی ہے چُھری
چُھری پکڑ کہ یہ چلاتی ہے کوئی بی بی
نہ ذبح کر میرے بچے کو میں دُعا دوں گی
جہاں رواں تیرے خنجر کی آب ہے ظالم
یہ بوسہ گاہِ رسالتِ مآب ہے ظالم
شریکِ دعوت ۔۔۔

ندا یہ آئی کہ سینے سے قبض کر لے جان
کہا کہ تیروں سے چھلنی ہے اے میرے رحمان
ابھی تو مار کے برچھی ہٹا ہے اک شیطان
اور اب تو ہے تہہِ زانوئے شمر یہ قرآن
یہ کرم ہے کے رُخِ پاک گردہے یا رب
تیرے حُسین کے سینے میں درد ہے یا رب
شریکِ دعوت ۔۔۔

ندا یہ آئی کہ مظلومیت کا رُتبہ شناس   
کمر سے کھینچ لے صابر کی جانِ بیوسواس   
کہا ملک نے تڑپ کر با درد و حسرت و یاس
کمر تو ٹوٹ گئی جب سے مر گئے عباس
صدائے غیب یہ آئی بحال ہے چہرہ
کہا ہے خون سے اصغر کے لال ہے چہرہ
شریکِ دعوت ۔۔۔

یہ گُفتگُو تھی کہ مُرجھا گیا رسول کا پُھول
فلک سے آگئے رُوحُ الامین حزین و ملول
کہا پُکار کے مُنہ ڈھانپ لوبرائے رسول
پسر کی لاش پہ کُھولیں گی اپنے بال بتول
صدا یہ سُن کے اس سمت چل پڑی زینب
تڑپ کے خیمے سے باہر نکل پڑی زینب
شریکِ دعوت ۔۔۔

نسیم اُدھر سے تو قُدسی کی صدا آئی
ادھر تڑپتی ہوئی بنتِ مُرتُضٰی آئی
قریبِ لاش جوخواہر بصد بُقا آئی
اخی کے حلقِ بُریدہ سے یہ صدا آئی
کوئی بزرگ نہ اب ہے نہ خُرد ہے زینب
نبی کی آل تمہارے سپرد ہے زینب
شریکِ دعوت ۔۔۔


shareeke daawate islam hai abu talib
nabi ko haq ka ek inaam hai abu talib
hari may wahi may ilham hai abu talib
haram ke azm ka ehram hai abu talib
ye sunke laaye jo ghuncha wo phool ho jaye
phir inki godh may pal kar rasool ho jaye
shareeke daawate ...

rasoole rab ke nigehban hai abu talib
nabi hai deen to emaan hai abu talib
nuzoole wahi ka unwan hai abu talib
baghair lafzon ka quran hai abu talib
inhi ke dum se hui ibtedae bismillah
inhi ne nukta diya zere ba-e-bismillah
shareeke daawate ...

payambari ki balaon ka rad abu talib
madad khuda ki hai shakle madad abu talib
nabi ki dhaal dame jiddo kad abu talib
nishana khatme rasul aur zad abu talib
jihad inka hai pas manzare jihade ali
ali hai baadme inke ye pehle nade ali
shareeke daawate ...

kahan hai tang nazar hum se bhi to aankh mila
hia inke kufr ka daawa to kuch sabooot bhi la
koi to rasm jihalat ki inke ghar may dikha
buton ke aagay jhuka inka sar sar apna jhuka
khuda ke noor pe aukhaad daalne wale
ye bud-shikan ko hai godhi may paalne wale
shareeke daawate ...

rasool inka bada ehteraam karte hai
sawabe deed se tanzeeme aam karte hai
sehr ko uth-te hi awwal ye kaam karte hai
inhe namaz se pehle salam karte hai
nabi agar kisi kaafir ko yun salami hai
to phir zaroor nabuwwat may koi khami hai
shareeke daawate ...

inhi ke ghar may khairul anaam salle alaa
pisar nabi ka hai khayam maqam salle alaa
isay naseeb hai ye ehteram salle alaa
ke inke khurd hai sare imam salle alaa
khata muaf ho ye bhi agar nahi momin
to phir jahan may koi bashar nahi momin
shareeke daawate ...

na janchiye ye rawayat na seerato kirdar
nabi ke ankh se ab inko dekiye ek baar
ye baargahe risalat may aap ka tha viqar
pachade khaake inhe roye ahmade mukhtar
wo aame huzn bana inka jab visal hua
ye gham rasool ke ummat may ek saal hua
shareeke daawate ...

ye marne wala gar emaan hi na laaya tha
to kya rasool ne kaafir ka gham manaya tha
zaban pe wa-abata baar baar aaya tha
wo khud bhi roye thay auro ko bhi rulaya tha
jatadiya tha ke jo mohsine risalat hai
to usko rona rulana nabi ki sunnat hai
shareeke daawate ...

ye baat agar ho ijazat to poochlun mai yahin
hussain ibne ali kya nahi thay mohsin-e-deen
hum inko roye to phir kyon ho koi chin bajabi
bane thay inka to naaqa rasoole arshe nashin
hussain soye shahe mursali ke seene par
ghazab hai shimr ka zaanu unhi ke seene par
shareeke daawate ...

ye bagoshe hosh ku jab haale karbala suniye
suna jo mere tasavvur ne jo wo zara suniye
bayan himmate sabro shahe huda suniye
wo aati hai malakul maut ki sada suniye
mila jo hukm ke sar se nikaal jaane hussain
kaha ke saqt hai ya-rab ye imtehane hussain
shareeke daawate ...

laga hai zakhme tabar beh raha hai sar se lahoo
bhare hai khoon may jaane rasool ke gaysu
khareeb jaake rakhun dil pe kis tarha kaboo
ke is lahoo may to hai fatema ke doodh ki boo
nida ye aayi ke aankhein to daal aankhon may
kaha behan ka  hai is dam khayal aankhon may
shareeke daawate ...

nida ye aayi ki gardan se khaynch jaan inki
kaha mai kya karoon gardan pe chal rahi hai churi
churi pakad ke ye chillati hai koi bibi
na zibha kar mere bache ko mai dua doongi
jahan rawan tere khanjar ki aab hai zaalim
ye bosagah e risalat  maab hai zaalim
shareeke daawate ...

nida ye aayi ki seene se qabz karle jaan
kaha ke teero se chalni hai ay mere rehman
abhi to maarke barchi hata hai ek shaitan
aur ab to hai tahe zanu-e-shimr ye quran
ye karm hai ke rukhe paak gard hai ya rab
tere hussain ke seene may dard hai ya rab
shareeke daawate ...

nida ye aayi ke mazloomiyat ke rutba shina
kamar se khaynch le saabir ki jaan bewaswa
kaha malak ne tadap kar ba dardo hasrato yaas
kamar to toot gayi jab se margaye abbas
sadaye ghaib ye aayi bahaal hai chehra
kaha hai khoon se asghar ke laal hai chehra
shareeke daawate ...

ye guftugu thi ke murjha gaya rasool ka phool
falak se aagaye roohul ameen hazeeno malool
kaha pukar ke moo dhamp lo bara-e-rasool
pisar ki laash pe kholengi apne baal batool
sada ye sunke usi simt chal padi zainab
tadap ke qaime se bahar nikal padi zainab
shareeke daawate ...

naseem udhar se to khudsi ki ye sada aayi
idhar tadapti hui binte murtaza aayi
khareebe laash jo qaahar basad buka aayi
aqi ke halqe bureeda se ye sada aayi
koi buzurg na ab hai na khurd hai zainab
nabi ki aal tumhare sipurd hai zainab
shareeke daawate ...
Noha - Abu Talib

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online