عابد نہ کبھی طوق و زنجیر پہ روئے
ہاں بے کسی حضرت شبیر پہ روئے

جب اذن و غا لے چکے عباس دلاور
دل تھام کے تنہائی شبیر پہ روئے
ہاں بے کسی حضرت شبیر پہ روئے

جب آخری رخصت کو حسین آئے حرم سے
عابد پہ کبھی اور کبھی ہم شیر پہ روئے
ہاں بے کسی حضرت شبیر پہ روئے

پانی جو ملا گیارہ محرم کی صبح کو
سب اہل حرم اصغر بے شیر پہ روئے
ہاں بے کسی حضرت شبیر پہ روئے

جائے گا قمر خلہ میں ہر شہ کا عزادار
دوزخ حرام اس پہ جو شبیر پہ روئے
ہاں بے کسی حضرت شبیر پہ روئے


abid na kabhi tauq-o-zanjeer pe roye
haan bekasiye hazrate shabbir pe roye

jab izne wighan le chuke abbas-e-dilawar
dil thaam ke tanhaiye shabbir pe roye
haan bekasiye....

jab aakhri ruqsat ko hussain aaye haram se
abid pe kabhi aur kabhi hamsheer pe roye
haan bekasiye....

pani jo mila gyarah moharram ki suboh ko
sab ehle haram asghare baysheer pe roye
haan bekasiye....

jaayega qamar khuld may har sheh ka azadaar
dozhak haram us pa jo shabbir pe roye
haan bekasiye....
Noha - Abid Na Kabhi
Shayar: Qamar
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online