زینب یہ رو کے بولی بھیا نہ دل دکھائو
کیا دیر کا سبب ہے یہ تو ہمیں بتائو
مشکیزہ بھر کے جلدی دریا سے لوٹ آئو
بچی کی تشنگی کو تم آکے خود بجھائو
عباس عباس عباس پانی لائو

وہ غمزدہ یقینا یادوں میں کھو گئی ہے
بابا کو ر وتے روتے خود تھک کے سو گئی ہے
یا تشنہ لب سکینہ بے ہوش ہو گئی ہے
پانی کا دیکے چھینٹا تم ہی اسے جگائو
عباس عباس عباس پانی لائو

ہاتھوں میں خالی کوزے بچے لیئے ہوئے ہیں
گرد سکینہ دیکھو حلقہ کئے ہوئے ہیں
بچے نہ جانے کب کا پانی پئے ہوئے ہیں
بن اب مر نہ جائے پانی نہیں پلائو
عباس عباس عباس پانی لائو

اس بے کسی پہ ہائے آتا ہے مجھ کو رونا
پرحول ہے اندھیرا اور خاک کا بچھونا
سینے پہ سونے والی کیا جانے ایسا سونا
پیاسی ہے مضطرب ہے آکر اسے سلائو
عباس عباس عباس پانی لائو

کانوں میں الطش کی آواز آرہی ہے
اور اس پہ فوج اعدائ یہ ظلم ڈھا رہی ہے
ان کو دکھا دکھا کر پانی بہا رہی ہے
بچے ہیں شہہ کے پیاسے اعدائ کو یہ بتائو
عباس عباس عباس پانی لائو

الفت کی آگ دل میں پیہم لگی ہوئی ہے
روزہ تمہارا دیکھے یہ حسرت دلی ہے
زائر بنے تمہارا یہ خواہش ذکی ہے
آنکھوں کی تشنگی کو تم ہی اسے بجھائو
عباس عباس عباس پانی لائو


zainab ye roke boli bhaiya na dil dukhao
kya der ka sabab hai ye to hame batao
mashkeeza bhar ke jaldi darya se laut aao
bachi ki tashnagi ko tum aake khud bujhao
abbas abbas abbas pani lao

wo ghamzada yakeenan yaadon may kho gayi hai
baba ko rote rote khud thak ke sogayi hai
ya tashnalab sakina behosh ho gayi hai
pani ka deke cheenta tum hi usay jagao
abbas abbas abbas pani lao

haton may khaali kuze bache liye hue hai
girde sakina dekho halqa kiye hue hai
bache na jaane kab ka pani piye hue hai
bin aab mar na jaaye pani unhe pilao
abbas abbas abbas pani lao

is bekasi pe haaye aata hai mujko rona
purhaul hai andhera aur khaak ka bichona
seene pe soni wali kya jaane aise sona
pyasi hai mustarib hai aakar usay sulao
abbas abbas abbas pani lao

kano may al-atash ki awaaz aa rahi hai
aur uspe fauje aada ye zulm dha rahi hai
unko dikha dikha kar pani baha raha hai
bache hai sheh ke pyase aada ko ye batao
abbas abbas abbas pani lao

ulfat ki aag dil may payham lagi hui hai
rouza tumhara dekhe ye hasrate dili hai
zaair bane tumhara ye khahishe zaki hai
aankhon ki tashnagi ko tum hi isay bujhao
abbas abbas abbas pani lao
Noha - Abbas Pani Lao
Shayar: Zaki
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online