بازار میں بنتِ علی دیتی تھی صدا بھائی
عباس کہاں ہو
سر پر بھی نہیں چادر لاکھوں ہیں تماشائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

اس عالم ِ غُربت میں کوئی بھی نہیں میرا
ہے خاکِ سفر سر پر اور رات رسن بستہ
پردیس میں زینب کو تقدیر کہاں لائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

پیوست ہے نیزے میں سر شاہِ شہیداں کا
یہ دیکھ کے اے غازی پھٹتا ہے میرا سینہ
مر جائے گی اس غم میں شبیر کی ماں جائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

دریا کے کنارے تم اعدائ سے گئے لڑنے
سب دیکھ رہی تھی میں دروازئہ خیمہ سے
اب جنگ ہماری بھی دیکھو تو ذرا بھائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

دُنیا کا سہارا ہے بابا جو ہمارا ہے
مشکل میں مگر میں نے تم کو ہی پُکارا ہے
اب ڈھونڈتی ہے تم کو بھیا میری بینائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

بے مونث و یاور ہے بتلائو کدھر جائے
اس طرح تو جینے سے بہتر ہے کے مر جائے
فریاد کرے کس سے ہوتی نہیں سُنوائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

اے میرے جری میری امداد کو آ جائو
مانگا ہے کنیزی میں ظالم نے سکینہ کو
ہے وقت قیامت کا معصوم ہے گھبرائی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔

احمد کی نواسی کا یاور یہی نوحہ تھا
نہ بھائی بچے میرے نہ کوئی بچا بیٹا
اب جی کے کروں گی کیاگر موت نہیں آئی
عباس کہاں ہو
عباس عباس ۔۔۔۔۔


bazaar may binte ali deti thi sada bhai
abbas kahan ho
sar par bhi nahi chadar laakhon hai tamashayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

is aalam e ghurbat may koi bhi nahi mera
hai khaak e safar sar par aur raat rasan basta
pardes may zainab ko taqdeer kahan laayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

paywast hai naize may sar shaahe shaheedan ka
ye dekh ke ay ghazi phat-ta hai mera seena
marjayegi is gham may shabbir ki maajayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

darya ke kanare tum aada se gaye ladne
sab dekh rahi thi mai darwazaye qaima se
ab jung hamari bhi dekho to zara bhai
abbas kahan ho
abbas abbas....

dunya ka sahara hai baba jo hamara hai
mushkil may magar maine tumko hi pukaara hai
ab dhoondti hai tumko bhaiya meri beenayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

be-monis o yawar hai batlao kidhar jaaye
is tarha to jeene se behtar hai ke mar jaye
faryaad kare kis se hoti nahi sunwaayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

ay mere jari meri imdad ko aajao
maanga hai kaneezi may zaalim ne sakina ko
hai waqt qayamat ka masoom hai ghabrayi
abbas kahan ho
abbas abbas....

ahmed ki nawasi ka yawar yehi noha tha
na bhai bache mere na koi bacha beta
ab jeeke karoongi kya gar maut nahi aayi
abbas kahan ho
abbas abbas....
Noha - Abbas Kahan Ho
Shayar: Yawar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online