سر کٹ گیا جب دشت میں زہرہ کے پسر کا
ہلتی تھی زمیں کاںپتا تھا ارشہ مولا
سرخ اندھی چلی خون اگلنے لگا صحرا
وحشت کہ یہ عالم تھا کے ہلتا تھا کلیجہ
تھی ایک قیامت سارے مقتل جو بپا تھی
گونجی ہوئی صحرا میں فقد ایک سادہ تھی
عباس کہاں ہو آجاؤ جہاں ہو

سینے پہ سنا کھا چکے اکبر گئے مارے
خالی ہوا جھلا علی اصغر گئے مارے
تنہا ہوئی سیدانیاں سرور گئے مارے
زینب ہے پریشاں چلے او جہاں ہو
عبّاس کہاں ہو

ناموس پیمبر کو بڑی أس تھی تم سے
کیا ایسی بھلا بھائی خطا ہوگی ہم سے
پھٹ جائے کلیجہ کہیں زینب کہ نہ غم سے
کیوں روتے ہو کس واسطے نظروں سے نہاں ہو
عبّاس کہاں ہو

اس دشت مصیبت میں کہاں کھو گئے بھائی
نیزے کی انی آیۂ تطہیر تک آئی
آجاؤ ذرا چھوڑ کے دریا کی ترائی
چادر سرے زینب سے اترتی ہے کہاں ہو
عبّاس کہاں ہو

یہ اہل ستم اور قیامت نہ مچادیں
سب لوٹ کے اسباب حرم آگ لگادیں
ڈر ہے کہیں بیمار کہ خیمۂ نہ جلادیں
پھر چار طرف صرف دھواں صرف ہوان ہو
عبّاس کہاں ہو

آنے پہ ستم اور ستمگار تلے ہیں
تلوار لئے سب در خیمۂ پہ کھڑے ہیں
مردوں میں فقعد عابد بیمار بچے ہیں
خنجر کہیں عابد کے گلے پر نہ رواں ہو
عبّاس کہاں ہو

بچہ کوئی روتا ہے ادھر ٹاپوں میں آ کے
بچی کوئی روتی ہے ادھر کھا کے طمانچہں
لاؤں تو بھلا لاؤں زباں ایسی کہاں سے
الفاظ نہیں حال جو بچوں کہ بیاں ہو
عبّاس کہاں ہو


sar katgaya jab dasht may zehra ke pisar ka
hilti thi zameen kaampta tha arshe moalla
surkh aandhi chali khoon ugalne laga sehra
wehshat ka ye aalam tha ke hilta tha kaleja
thi ek qayamat sare maqtal jo bapa thi
gunji hui sehra may faqad ek sada thi
abbas kahan ho aajao jahan ho

sine pa sina kha chuke akbar gaye maare
khaali hua jhoola ali asghar gaye maare
tanha hui saydaniya sarwar gaye maare
zainab hai pareshan chale aao jahan ho
abbas kahan ho....

namuse payambar ko badi aas thi tumse
kya aisi bhala bhai khata hogayi hamse
phatjaye kaleja kahin zainab ka na gham se
kyon roothe ho kis waaste nazro se niha ho
abbas kahan ho....

is dashte musibat may kahan kho gaye bhai
naize ki ani aayaye tatheer tak aayi
aajao zara chorke darya ki taraai
chadar sare zainab se utarti hai kahan ho
abbas kahan ho....

ye ahle sitam aur qayamat na machade
sab lootke asbabe haram aag lagade
darr hai kahin bemaaar ka qaima na jalade
phir char taraf sirf dhuan sirf huan ho
abbas kahan ho....

aane pa sitam aur sitamgar tulay hai
talware liye sab dare qaima pa khade hai
mardo may fakad abide bemaar bache hai
khanjar kahin abid ke galay par na rawan ho
abbas kahan ho....

bacha koi rota hai udhar taapo may aake
bachi koi roti hai idhar khaake tamachay
laaun to bhala laaun zuban aisi kahan se
alfaaz nahi haal jo bachon ka bayan ho
abbas kahan ho....
Noha - Abbas Kahan Ho

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download mp3
Listen Online