عباس کا جب ذکر وفا کرتی تھی صغرا
بس ْْیر کی اس وقت دعا کرتی تھی صغرا

اک بار بھر گھر کو ان آنکھوں سے دیکھوں
رو رو کے مدینے میں دعا کرتی تھی صغرا

پردیس میں بابا نے مجھے دل سے بھلایا
شکوہ یہی نانی سے کیا کرتی تھی صغرا

اب گھٹنیوں چلے لگا ہو گا میرا اصغر
یہ کہہ کے بہت یاد کرتی تھی ص غرا

آتا تھا مدینے میں اگر کوئی مسافر
بے چین بہت سن کے ہوا کرتا تھی صغرا

اک آس لگائے ہوئے وہ بیٹھی تھی در پر
آئیں گے چچا لینے کہا کرتی تھی صغرا


abbas ka jab zikr e wafa karti thi sughra
bas khair ki us waqt dua karti thi sughra

ik bar bhare ghar ko mai in aankhon se dekhoo
ro ro ke madina may dua karti thi sughra

pardes may baba ne mujhe dil se bhulaya
shikwa yehi nani se kiya karti thi sughra

ab ghutniyo chalne laga hoga mera asghar
ye keh ke bohat yaad kiya karti thi sughra

aata tha madina may agar koi musafir
bechain bohat sunke hua karti thi sughra

ek aas lagaye hue wo baithi thi dar par
aayenge chacha lene kaha karti thi sughra
Noha - Abbas Ka Jab Zikr

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download mp3
Listen Online