کس شیر کی آمد ہے کے رن کانپ رہا ہے
رن اک طرف چرخِ کوہن کانپ رہا ہے
رُستم کا بدن زیرِ کفن کانپ رہا ہے
ہر قصرِ سلاطینِ زمن کانپ رہا ہے
شمشیر بکف دیکھ کے حیدر کے پسر کو
جبرئیل لرزتے ہیں سمیٹے ہوئے پر کو
عباسِ علمدار عباسِ علمدار

اس شان سے اسلام کے پرچم کو اُٹھایا
سر دے دیا اور دینِ محمد کو بچایا
کیا مقصدِ شبیر یہ تُوں نے ہے بتایا
اے شِہ کے وفادار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

ہے سب سے جُدا تیری وفائوں کا کرینہ
پانی نہ پیا تُو نے ترائی کو تو چھینا
آنکھوں سے جُدا کیسے ہو تصویرِ سکینہ
اُس سے ہے تجھ کو پیار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

ہے اشک فشاں آج بھی غم میں تیرے پانی
یہ مشک سکینہ کی علم تیری نشانی
روتا ہے جہاں سُن کے تیرے غم کی کہانی
اے فوج کے سردار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

حیدر کی دُعائوں کا صلہ ہے میرے عباس
زہرا نے تجھے بیٹا کہا ہے میرے عباس
ہر دور میں ہر دل کی صدا ہے میرے عباس
زینب کے مددگار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

تم کو نہ پُکارے تو بھلا کس کو پُکارے
ہے کُشک بھتیجی کا گلا پیاس کے مارے
روتی ہے سکینہ جو کبھی غم میں تمہارے
ہنستے تھے ستمگار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

عباس کے لاشے پہ یہ کہتی رہے سرور
رُخصت ہوئی بینائی جو رُخصت ہوئے اکبر
توڑی ہے کمر غم نے تیرے میری برادر
اے فوج کے سردار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔

کرتے ہیں دُعا احمد و محسن یہی پیہم
ہاتھوں پہ اُٹھائے ہوئے عباس کا پرچم
جائیں گے زیارت کو تیری کرب و بلا ہم
ہم تیرے ہیں غمخوار اے عباسِ علمدار
عباسِ ۔۔۔۔۔


kis sher ki aamad hai ke ran kaamp raha hai
ran ek taraf charkhe kohan kaamp raha hai
rustum ka badan zere kafan kaamp raha hai
har qasre salateene zaman kaamp raha hai
shamsheer bakaf dekh ke haider ke pisar ko
jibreel larazte hai samete hue par ko
abbase alamdaar abbase alamdar

is shaan se islam ke parcham ko uthaya
sar dediya aur deene mohammad ko bachaya
kya maqsade shabbir ye tune hai bataya
ay sheh ke wafadar ay abbase alamdaar
abbase...........

hai sab se juda teri wafaon ka kharina
pani na piya tune taraayi ko to cheena
aankhon se juda kaise ho tasveere sakina
usse hai tujhko pyar ay abbase alamdaar
abbase...........

hai ashq fishaan aaj bhi ghan may tere pani
ye mashq sakina ki alam teri nishani
rota hai jahan sunke tere gham ki kahani
ay fauj ke sardaar ay abbase alamdaar
abbase...........

haider ki duwaon ka sila hai mere abbas
zahra ne tujhe beta kaha hai mere abaas
har daur may har dil ki sada hai mere abbas
zainab ke madadgaar ay abbase alamdaar
abbase...........

tumko na pukare to bhala kisko pukare
hai khushk bhatiji ka gala pyaas ke maare
roti hai sakina jo kabhi gham may tumhare
haste thay sitamgaar ay abbase alamdaar
abbase...........

abbas ke laashe pe ye kehte rahe sarwar
ruksat hue binaayi jo ruksat huye akbar
todi hai kamar gham ne tere meri baradar
ay fauj ke sardaar ay abbase alamdaar
abbase...........

karte hai dua ahmad-o-mohsin yehi paiham
hathon pe uthaye hue abbas ka parcham
jayenge ziyarat ko teri karbobala hum
hum tere hai ghamkhaar ay abbase alamdaar
abbase...........
Noha - Abbas e Alamdar
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online