اکبر بھی نہیں باقی اصغر بھی نہیں باقی
قرآن تھا جس گھر میں وہ گھر بھی نہیں باقی
ہر طرح کے صدموں سے بیتاب سکینہ ہے
آکر اسے سمجھائو
عباس چلے آئو

کانوں کی لویں کھینچی کانوں سے گوہر توڑے
یا کہکشاں توڑی یا شمس و قمر توڑے
توڑے ہیں زمانے میں اخلاق کے سانچے بھی
مارے ہیں طمانچے بھی بچی پہ ترس کھائو
عباس چلے آئو

یہ رات یہ تاریکی یہ دشت یہ سنناٹا
لمحوں کے تغیر میں صدیوں کا سفر کاٹا
یہ جلتے ہوئے خیمے گھبرا کے نہ مر جائے
معصوم کدھر جائے معصوم کو سمجھائو
عباس چلے آئو

کیا ایسے بہادر کو دیکھا کبھی دنیا نے
دانتوں سے علم تھاما بازو سے کٹے شانے
سر گریہے وحشت میں دیوار سے مارے گی
عموں کو پکارے گی عموں کو بلا لائو
عباس چلے آئو

اک ہول سا اٹھتا ہے اس شام غریباں میں
اک خوف سا ڈستا ہے جنگل میں بیاباں میں
زنجیر بپا بھائی پھوپھی بھی رسن بستہ
پھر بند ہر اک رستہ اب اور نہ تڑپائو
عباس چلے آئو


akbar bhi nahi baakhi asghar bhi nahi baakhi
quran tha jis ghar may wo ghar bhi nahi baakhi
har tarha ke sadmo se betaab sakina hai
aakar usay samjhao
abbas chale aao

kano ki lawaen khenchi kano se gowhar today
ya kahkashan todi ya shams-o-qamar today
today hai zamane may iqlaaq ke saanche bhi
maare hai tamache bhi bachi pa taras khao
abbas....

ye raat ye tareekhi ye dasht ye sannata
lamho ke taghayyur may sadiyo ka safar kaata
ye jalte hue qaime ghabrake na mar jaaye
masoom kidhar jaaye masoom ko samjhao
abbas....

kya aisay bahadur ko dekha kabhi duniya ne
daato se alam thama baazu se kate shaane
sar giriyae wehshat may deewar se maaregi
ammu ko pukaregi ammu ko bula lao
abbas....

ek haul sa uth ta hai is shame ghariban may
ek khauf sa dasta hai jangal may biyaban may
zanjeeer bapa bhai phuphi bhi rasan basta
phir band har ek rasta ab aur na tadpao
abbas....
Noha - Abbas Chale Aao

Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download mp3
Listen Online