عباس اے شیر نیستانِ حیدر
دیتی تھی صدا زینب رو کر
عباس اے شیر ۔۔۔

کیا اسی دن کے لیے مانگی تھی بابا نے دُعا
آ کے پردیس میں ہو جائو گے تم ہم سے جدا
سوتے ہو چین سے دریا کے کنارے بھیا
کیا سنا ئی نہیں دیتی تمہیں ھل من کی صدا
عباس تنہا ہیں کھڑے رن میں سرور
عباس اے شیر ۔۔۔

اے میرے شیر جواں اے میرے بھائی ہو کہاں
ساکھ ہے دل پہ میرے تیری جدائی ہو کہاں
دیر سے دیتی ہوں بھیا میں دُہائی ہو کہاں
لُٹتی ہے فاطمہ زھرائ کی کمائی ہو کہاں
عباس خنجر ہے حلق سرور پر
عباس اے شیر ۔۔۔

کیا اسی دن کے لیے ساتھ بہن تھی آئی
آ گئی نیند جو دریا کی ترائی پائی
پھر پلٹ کر ہمیں صورت بھی نہیں دکھلائی
آ گیا رن سے علم تم نہیں آئے بھائی
عباس پھٹتا ہے میرا صدمے سے جگر
عباس اے شیر ۔۔۔

ٍٍٍٍِِِِِْْْْْْْْْْْْْْْْْْْْگر کے گھوڑے سے صدا باپ کو اکبر نے جو دی
دلبر فاطمہ کی عجب حالت تھی
ہاتھ ملتے تھے کبھی گھاٹ کو تکتے تھے کبھی
تھام کر ٹوٹی کمر کہتے تھے فرزند نبی
عباس لائو ں کیسے لاش اکبر
عباس اے شیر ۔۔۔

حال شبیر کا اب تو نہیں دیکھا جاتا
ہے کمر خم نہیں آ نکھوں سے سو جھائی دیتا
یہ ضعیفی یہ جوان لال کا صدمہ بھیا
تھام لو بڑھ کے ذرا ہاتھ تم ہی بھائی کا
عباس کھاتے ہیں ٹھوکر پر ٹھوکر
عباس اے شیر ۔۔۔

بھائی کو بھول گئے دھیان نہ بہنوں کا رہا
یاد آیا نہ کوئی پائی جو دریا کی ہوا
ہے کس دل سے کیا تم نے گوارا بھیا
ہر تماچے پہ سکینہ نے تمہیں یاد کیا
عباس جب چھینے گئے کانوں سے گوہر
عباس اے شیر ۔۔۔

ہے قیامت کا سماں لوٹ ہے ہر سمت مچی
کوئی پُرسا نہیںحالت عجب بچوں کی
تعزیانے کوئی کھاتا ہے تماچے کوئی
آگ دامن میں ہے معصوم سکینہ کے لگی
عباس بھیا اُٹھو لو جلد خبر
عباس اے شیر ۔۔۔

چھوڑ کر دشت مُصیبت میں بہن کو بھائی
تم نے اچھا ہی کیا دُور بسائی بستی
دیکھ سکتے تھے کہاں تم تو ہائے حالت میری
بلوائ عام میں بھیا میں کُھلے سر ہوں کھڑی
عباس عدائ لے گئے چادر
عباس اے شیر ۔۔۔

عظمت و عزت سادات بُھلا دی بھائی
آگ خیموں میں لعینوں نے لگا دی بھائی
مسند احمد مُرسل بھی جلدی بھائی
تعزیانوں سے ہے عابد کو سزا دی بھائی
عباس غش میںہے پڑا میرادلبر
عباس اے شیر ۔۔۔


abbas ay shere nayastane hyder
deti thi sada zainab rokar
abbas ay shere....

kya isi din ke liye maangi thi baba ne dua
aake pardes may hojaoge tum humse juda
sotay ho chain se darya ke kanaare bhaiya
kya sunayi nahi deti tumhay halmin ki sada
abbas tanha hai khade ran may sarwar
abbas ay shere....

ay mere shere jawan ay mere bhai ho kahan
shaakh hai dil pe mere teri judaai ho kahan
dayr se deti hoo bhaiya mai duhaai ho kahan
lut-ti hai fatema zehra ki kamayi ho kahan
abbas khanajr hai halqe sarwar par
abbas ay shere....

kya isi din ke liye saath behan thi aayi
aagayi neend jo darya ki tarayi paayi
phir palat kar hame soorat bhi nahi dikhlayi
aagaya ran se alam tum nahi aayi bhai
abbas phat-ta hai mera sadme se jigar
abbas ay shere....

girke ghoray se sada baap ko akbar ne jo di
dibare fatema zehra ki ajab haalat thi
haath malte thay kabhi ghaat ko taktay thay kabhi
thaam kar tooti kamar kehti thay farzande nabi
abbas laaun kaise laashe akbar
abbas ay shere....

haal shabbir ka ab to nahi dekha jaata
hai kamar kham nahi aankhon se soojhayi deta
ye zeefi ye jawan laal ka sadma bhaiya
thaam lo badke zara haath tumhi bhai ka
abbas khaate hai thokar par thokar
abbas ay shere....

bhai ko bhool gaye dhyaan na behno ka raha
yaad aaya na koi paayi jo darya ki hawa
haye kis dil se kiya tum ne gawara bhaiya
har tamache pe sakina ne tumhay yaad kiya
abbas jab cheene gaye kano se gohar
abbas ay shere....

hai qayamat ka saman loot hai har simt machi
koi pursa nahi haalat ajab bachon ki
taaziyane koi khaata hai tamache koi
aag daaman may hai masoom sakina ke lagi
abbas bhaiya utho lo jald khabar
abbas ay shere....

chor kar dashte musibat may behan ko bhai
tumne acha hi kiya door basayi basti
dekh sakte thay kahan tum to haye halat meri
balwaye aam may bhaiya mai khule sar hoo khari
abbas aada le gaye chaadar
abbas ay shere....

azmato izzate saadat bhula di bhai
aag qaimo may layeeno ne lagadi bhai
masnade ahmade mursal bhi jaladi bhai
taaziyano se hai abid ko saza di bhai
abbas ghash may hai pada mera dilbar
abbas ay shere....
Noha - Abbas Ay Shere

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online