بابا میرے بابا
اب میں سو جاؤنگی بابا
باپ کے سر سے لپٹ کر یہ سکینہ بولی
اب میں سو جاؤنگی بابا
بند ہوجاینگی کچھ دیر میں آنکھیں میری
اب میں سو جاؤنگی بابا

چلتے ناقے سے جو ظالم نے گرایا تھا مجھے
اک بی بی نے گلے آکے لگایا تھا مجھے
اپنی آغوش میں اک بار سلایا تھا مجھے
ساتھ بابا کے میرے آئی ہے پھر وہ بی بی
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ...

قید یہ ختم ہے زندان کی کچھ دیر کے بعد
پاس اصغر کے چلی جاؤنگی کچھ دیر کے بعد
بند ہوجاینگی انکھیں میری کچھ دیر کے بعد
پیاسے ہونٹوں سے سنا ینگے جو بابا لوری
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ...

سر جھکاے ہوے بے اس کھڑے ہیں اماں
کربلا والے میرے پاس کھڑے ہیں اماں
یہاں اکبر وہاں عبّاس کھڑے ہیں اماں
آگئے سب میں جنھیں یاد کیا کرتی تھی
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ...

ماں کی نظروں سے سکینہ کو چھپا لو بھیا
مجھ کو قرآن مصائب تو سنا دو بھیا
قبلہ رو ہاتھ پہ دکھیا کو لٹادو بھیا
تم سے وعدہ رہا دوہراتے ہوے ناد علی
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ...

پھر نگاہوں میں میری تیروں بھرا ہے لاشہ
ہاتھ پھیلاے ہوے ہیں میرے پیارے بابا
گونجتی ہے وہ الاییا یا بنایا  کی صدا
آج آواز وہی اتی ہے مقتل والی
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ...

جب سے دربار میں غربت کا وہ منظر دیکھا
شہ کی تنہائی نے اک پل مجھے سونے نہ دیا
ختم یہ خوف ہوا آج سے اکبر میرا
کوئی اب بابا کے ہونٹوں پہ نہ ماریگا چھڑی
اب میں سو جاؤنگی بابا ...
باپ کے سر سے ..


baba mere baba
ab mai so jaungi baba
baap ke sar se lipat kar ye sakina boli
ab mai so jaungi
bandh hojayengi kuch dayr may aankhein meri
ab mai so jaungi

chalte naaqe se jo zaalim ne giraya tha mujhe
ek bibi ne galay aake lagaya tha mujhe
apni aaghosh may ek baar sulaaya tha mujhe
saath baba ke mere aayi hai phir wo bibi
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...

qaid ye khatm hai zindan ki kuch dayr ke baad
paas asghar ke chali jaungi kuch dayr ke baad
band hojayengi aankehin meri kuch dayr ke baad
pyase honton se sunayenge jo baba lori
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...

sar jhukaye huwe be-aas khade hai amma
karbala walay mere paas khade hai amma
yahan akbar wahan abbas khade hai amma
aagaye sab mai jinhe yaad kiya karti thi
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...

maa ki nazron se sakina ko chupalo bhaiya
mujhko quran e masaib to sunado bhaiya
qibla rooh haath pe dukhya ko litado bhaiya
tumse wada raha dohrate huwe nad e ali
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...

phir nigahon may meri teeron bhara hai laasha
haath phailaye huwe hai mere pyare baba
goonjti hai wo ilaiyya ya bunayya ki sada
aaj awaaz wahi aati hai maqtal wali
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...

jabse darbar may ghurbat ka wo manzar dekha
sheh ki tanhai ne ek pal mujhe sonay na diya
khatm ye khauf hua aaj se akbar mera
koi ab baba ke honton pe na maarega chadi
ab mai so jaungi...
baap ke sar se...
Noha - Ab Mai So Jaungi
Shayar: Hasnain Akbar
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online